جہلم

تعلیمی سیشن کے انتہائی اہم دنوں میں اساتذہ کی غیرتدریسی سرمیاں قابل قبول نہیں۔ چودھری راشد محمود

جہلم: تعلیمی سیشن کے ان اہم ایام میں اساتذہ پر غیر تدریسی سرگرمیاں مسلط کرنا سراسر غلط اقدام ہے ہم یہ ہرگز تسلیم نہیں کریں گے کورونا کی وجہ سے پہلے ہی طلباوطالبات کی تدریس کا بہت نقصان ہو چکا ہے۔

ان خیالات کا اظہار چوہدری راشد محمود ضلعی صدر پنجاب ٹیچرز یونین جہلم نے کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ محکمہ تعلیم پنجاب آئے روز نئے تجربات اور مجرب فارمولوں کی زد میں ہے اور اساتذہ کرام کو پڑھانے کے اصل مقصد سے ہٹاکر نت نئے کاموں میں الجھایا جا رہاہے۔ اب جبکہ 2 مہینے کی چھٹیوں کے بعد پھر سے سکول کھل رہے ہیں اور طلباء کو پڑھانے کا وقت آ رہاہے۔

اس موقع پر ضلعی صدر پنجاب ایجوکیٹرز ایسوسی ایشن احسان الٰہی شاکر کا کہنا تھاکہ اب سکول کھل گئے ہیں امتحانات قریب آگئے ہیں جبکہ اساتذہ کی غیر تدریسی ڈیوٹیاں سمجھ سے باہر ہیں اساتذہ کو PERs اکٹھا کرنے پر لگا دیا گیا ہے۔ سرکاری دستاویزات کو ڈیجیٹیلائز کرنا یقینا ایک اچھا قدم اور وقت کی ضرورت بھی ہے لیکن کورونا کے لاک ڈاؤن کی وجہ سے تعلیم کا پہلے ہی بہت نقصان ہوچکا ہے۔ اب بطور معاشرہم مزید نقصان کے متحمل نہیں ہو سکتے۔

انہوں نے کہا کہ PERs جمع کروانا براہ راست اساتذہ کرام کی ذمہ داری نہیں ہے۔ ان حالات میں بالخصوص جن اساتذہ کی سروس15، 20 سال سے اوپر ہے ان کی پوری سروس کی PERs کیسے اکٹھی کی جائیں گی۔ جبکہ بہت سے رپورٹنگ آفیسرز یا تو ریٹائر ہوچکے ہوں گے یا وفات پا چکے ہوں گے۔ اس لئے اساتذہ کو روز نئی پریشانی میں مبتلا کرنے کی بجائے ان کو طلباوطالبات کو پڑھانے تک ہی محدود رکھا جائے۔

انہوں نے کہا کہ اگر PERs کو ڈیجیٹلائز کرنا ضروری ہے تو پوری سروس کی بجائے پچھلے تین سال کی PERs مانگی جائیں اور اگر اس سلسلے کو سال 2020 کیs PER سے شروع کیا جائے اور آئندہ کی تمام PERs ڈیجیٹلائز کی جائیں تو یہ اور بھی اچھا اقدام ہوگا۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button