کالم و مضامین

مرغانِ سیاست — تحریر: محمد امجد بٹ

مرغوں کے ڈربے میں 100مرغے عیش و عشرت کی زندگی گزارنے میں مصروف تھے۔مرغوں کا مالک انکے قیام و طعام کا مکمل خیال رکھتا تھا۔عیش و عشرت اور شاہانہ طرزِ زندگی نے مرغوں کو مغرور بنا دیا۔ایک ڈربے میں رہنے کے باوجود انہوں نے دھڑے بندی قائم کرلی۔ہر تھوڑا طاقتورمرغے نے اپنا الگ گروپ قائم کر لیا۔پھر کیا تھا ڈربہ بھی سیاسی اکھاڑہ بن گیا۔

دن گزرتے رہے اور بلا آخر مرغوں کے برے دن شروع ہو گئے۔ڈربے کے مالک نے ایک دن ڈربے کی جگہ تبدیل کر دی۔رات کوگیدڑ آیا اور ڈربے میں اتنی کثیر تعدار میں مرغوں کو دیکھ کر بلیوں ہسنے لگا۔گیدڑ ڈربے کے قریب گیا اور داو لگا کر ایک مرغے کو دبوچ لیا۔مرغے نے کہا گیدڑ بھائی میں تو تمھارا مدح خواں اور سپورٹر ہوں اگر آپ مجھے چھوڑ دو گے تو میں تمھیں ڈربے میں شامل ایک ایک مرغے کی نشاندہی کرتا رہوں گا جسکو تم اپنا لقمہء شکم بنا سکتے ہو۔ گیدڑ نے اسکو چھوڑ دیا۔اوراسے ڈربے میں اپنا مخبرِ خاص مقرر کر دیا۔

اب ہوتا یہ کہ جب بھی گیدڑ کو بھوک لگتی وہ ڈربے کے مخبر سے رابطہ کرتا۔مخبر مرغا اس مرغے کو جسکو گیدڑ کی خوراک بنانا ہوتا اس چور دروازے کے قریب لے آتا جہاں سے گیدڑ باآسانی اس کا شکار کر لیتا۔گیدڑ کے وارے نیارے ہونے لگے ۔۔۔۔۔ڈربے کی سیاست میں منافقت نے جنم لے لیا۔ اور اسی منافقت کی وجہ سے روزانہ گیدڑ ایک مرغے کو اپنا شکار بناتا اور پیٹ بھرتا ۔۔۔۔۔۔۔

ہر مرغے کے شکار ہونے پر دوسرے مرغے شکر ادا کرتے کہ وہ بچ گئے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔دن گذرتے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔ گیدڑ آتا رہا۔۔۔۔۔۔۔ مرغے شکار ہوتے رہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈربہ خالی ہوتا رہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔موت کا رقص جاری رہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہر بچ جانے والا اپنے بچ جانے پہ شکر ادا کرتا رہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک سے دو گئے۔۔۔۔۔ دس سے بیس گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھر آخری عشرئہ موت شروع ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مخبر ڈربے کو خالی ہوتا دیکھ کر خوش ہوتا کہ وہ اکیلا بچ جائے گا اور ڈربے کے سیاہ اور سفید کا مالک بن جائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گنتی ختم ہونے لگی۔۔۔۔۔۔ننانوے مرغے گیدڑ نے لقمہء شکم بنا دیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آخری مخبر بچ گیا۔۔۔۔۔۔جو سکون کی نیند سو رہا تھا کہ گیدڑ ڈربے کے قریب آگیا۔۔۔۔۔مرغے نے اسکو کہا کہ اب تو تمام کے تمام مرغے تم نے ہضم کر لئے اب تو ڈربے میں میرے علاوہ کوئی نہیں بچا ۔۔۔۔ ۔۔۔ اب کیا لینے آئے ہو۔۔۔۔۔۔۔۔ گیدڑ نے کہا کہ اب تمھاری باری ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ سن کر مرغا پریشان ہو گیا۔۔۔۔۔۔

اس نے گیدڑ کو کہا کہ وہ تو اس کا ساتھی اور مخبرِ خاص ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گیدڑ نے کہا کہ جب میں نے پہلی بار تمھیں دبوچا تھا تو تم نے اپنی جان بچانے کے لئے اپنے دوستوں کے خون کا سودا کر لیا۔۔۔۔۔۔۔۔ میں نے دل میں سوچا کہ اگر میں تمھاری بات مان لوں تو میرے وارے نیارے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ ڈربے میں نہ احتجاج ہو گا نہ شور شرابہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میرے کام بھی چلتا رہے گا اور شکار بھی ہوتا رہے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اگر پہلے دن تم شور شرابہ کرتے ۔۔۔۔۔۔۔ احتجاج ہوتا ۔۔۔۔۔۔۔ڈربے میں موجود تمام مرغے اکھٹے ہو جاتے تو مجھے چونچیں مار مار کر بھی ہلاک کر سکتے تھے۔۔۔۔۔۔۔ مگرررررررررررررر۔۔۔۔۔۔۔تم نے میرا کام آسان بنایا اور تمھاری وجہ سے میں نے پورا ڈربہ خالی کردیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تم اس قابل نہیں کہ تمھارا خون معاف کیا جائے کیونہ تم غدار ہو اور تم نے اپنی جان بچانے کے خاطر دوسروں کی جان کا سودا کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تم دوسروں کو لقمہء اجل بنتا ددیکھ کر خوش ہوتے رہے ۔۔۔۔۔۔۔اور میں نے ڈربہ اجاڑ دیا ۔۔۔۔۔۔۔یہ کہہ کے گیدڑ نے اس آخری اور سوویں مرغے کو بھی اپنا شکار کر لیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمارے ہاں بھی مرغانِ سیاست کے ساتھ کچھ ایسا ہی ہو رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک جاتا ہے تو دوسرے شکر ادا کرتے ہیں کہ ہم بچ گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پہلے چند ایک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اب یہ تعدار درجنوں سے شروع ہوکرسو تک جائے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گنتی ہے کہ اب ختم ہونے کا نام نہیں لے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کب ختم ہوگایہ سفر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کب لیں گے ہوش کے ناخن ۔۔۔۔۔۔۔۔

اگر عدم اتحاد کی یہ فضا قائم رہی اور اسی طرح بکھرے رہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تو مارنے والے گیدڑ مرغوں کی طرح شکار کرتے رہیں گے اور یہ مرتے رہیں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اب بھی وقت ہے اپنی صفوں میں اتحاد قائم کریں ۔۔۔۔۔۔۔ گیدڑ کے مخبر بننے کی بجائے دوستوں کی جانیں بچائیں ۔۔۔۔۔ ۔۔۔ اگرپھر بھی عقل اور ہوش سے کام نہ لیا تو پھررررررررررررررررررررر۔ ’’’’ نہ رہے گا بانس نہ بجے گی بانسری ‘‘‘‘‘‘‘‘

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button