پنڈدادنخان کے نواحی علاقہ میں جنسی بھیڑیئے نے نوعمر لڑکے کو بدفعلی کا نشانہ بنا ڈالا

0

پنڈدادنخان: زمین پھٹی نہ آسمان گرا، پنڈدادنخان کے نواحی علاقہ ٹوبہ میں با اثرشخص عبدالخالق نے نو عمرلڑکے ارسلان جاوید سے زبردستی بدفعلی کر دی جبکہ تھانہ لِلہ کی پو لیس اور ڈاکٹر ملزم کی پشت پناہی کرنے میں سرگرم ،سارے واقع کو غلط رنگ دے کر عملی بد فعلی کے واقع بد فعلی کی کوشش میں تبدیل کر دیا۔ متاثرہ بچے کی ماں انصاف کے لیے دربدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور، چیف جسٹس آف پاکستان انصاف دلائیں متاثرہ خاتون کی اپیل۔

تفصیلات کے مطابق تحصیل پنڈدادنخان کے نواحی علاقہ ٹوبہ کی رہائشی شاہین اختر بی بی نے تحصیل پریس کلب رجسٹرڈ پنڈدادنخان میں تحریری درخواست دیتے ہوئے موقف اختیا ر کیا کہ میرے بیٹے محمد ارسلان جاوید کے ساتھ ٹوبہ کے بااثر شخص عبدالخالق ولد مختار نے زبردستی بد فعلی کی جس کے بعد میں نے تھانہ لِلہ میں تحریری درخواست دی جو بڑی مشکل سے SIاکرم نے رشوت وصول کرنے کے بعد لی جس پرمورخہ 7/3/2018کو مقدمہ نمبر 17بجرم 377/511درج کیا گیا جو کہ تھانہ لِلہ کے ایس ایچ او ،I Sاکرم اور ڈاکٹر کی ملی بھگت سے بدفعلی کے مقدمہ کو بدفعلی کی کوشش کے مقدمہ میں تبدیل کر دیا ۔

ملزم عبدالخالق نے پولیس اور میڈیکل رپورٹ بنانے والے ڈاکٹر کو بھا ری رشوت دی اور میرے ان پڑھ ہونے کا فائدہ اُٹھا کر مجھ سے زبانی بیان لیا اور سفید کاغذپر دستخط کروا لیے جس میں انہوں نے یہ لکھا کہ میرے بیٹے کے ساتھ بدفعلی کی کوشش کی گئی اور مقامی پولیس اور ملزم کے ورثاء نے مجھ سے زیادتی کی ہے جو کہ میرے بیان کے متضاد ہے پولیس اور ڈاکٹر نے مجھے مطمئن کر کہ دھوکہ سے مجھ سے سفید کاغذ پر دستخط کروائے اور ہمیں جھوٹا ثابت کرنے کے لیے سارے کیس کو ہی بدل دیا ۔

ڈاکٹر نے بوقت وقوعہ میرے بیٹے کا اور اس کے کپڑوں کا معائنہ نہ کیا اور نہ ہی پولیس نے کپڑوں کو قبضہ میں لیا بلکہ اس کے ہاتھ پاؤں دھولوا کر ہمیں جھوٹی تسلی دے کر گھر بھیج دیا گیا عبدالخالق انتہائی بااثر شخص ہے اور ہمارے پاس اتنے پیسے نہیں ہیں کہ ہم وکلا کی فیس اور تھانے کچہری میں لگا سکیں میں چیف جسٹس آف پاکستان سے استدعا کرتی ہوں کہ ہماری دادرسی کی جائے اور انصاف دلانے میں ہماری مدد کی جائے اور سارے واقع کا خود از نوٹس لے کر مجھے اور میرے متاثرہ بیٹے کو انصاف دلایا جائے اور درندہ صفت حیوان کو کفیر کردار تک پہنچایا جائے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.