دینہاہم خبریں

اسسٹنٹ کمشنر دینہ کا ناجائز تجاوزات کے خلاف آپریشن، بورڈ اکھاڑ دیئے گئے، سامان ضبط

دینہ: اے سی دینہ کی نگرانی میں میونسپل کمیٹی کے اہلکاروں کاناجائز تجاوزات کے خلاف آپریشن ،بورڈ گرادیئے گئے سامان ضبط ، بغیر نوٹس کے آپریشن، دوکاندار حواس باختہ، کسی دوکاندار کی روزی روٹی بند نہیں کی جائے گی، اسسٹنٹ کمشنر

تفصیلات کے مطابق پیر کے روز اسسٹنٹ کمشنر دینہ عمبر گیلانی کی نگرانی میں میونسپل کمیٹی کے عملہ نے ناجائز تجاوزات کے خلاف آپریشن کرتے ہوئے عارضی طورپرپڑے ہوئے دوکانداروں کے سامان کوبے دردی سے ہیوی مشینری سے توڑکر ٹرالیوں میں لوڈ کرکے میونسپل کمیٹی لے گئے، تھانہ دینہ پولیس اورموٹروے پولیس کی بھاری نفری بھی موجود تھی، کسی بھی دوکان دارکو وارننگ نہیں دی گئی اوراچانک آپریشن کاآغاز کردیا گیا۔

دوکانداروں کاکہنا ہے کہ اگرنوٹس دیتے تو ہم سامان اُٹھا لیتے اور پبلسٹی کے لیے لگائے گئے بورڈز کاہم باقاعدہ ٹیکس دیتے ہیںلیکن سامان کے ساتھ ہمارے بورڈ بھی توڑدیئے گئے، یہ بھی بات قابل تذکرہ ہے کہ ناجائز تجاوزات کے خلاف آپریشن صرف فیصل چاٹ سے لیکر فیصل بینک تک ہی کیاجاتا ہے یامنگلاروڈ اورمین بازار میں لگی ریڑھیوں کے خلاف جبکہ پولیس چوکی سے لیکر الفلاح بینک تک بااثر شخصیات کے سبزی فروٹ کے ٹھیے لگوارکھے ہیں اورماہانہ ہزاروں روپے سرکاری زمین کابھتہ وصول کرتے ہیں مگر میونسپل کمیٹی کونظرنہیں آتے اورجہاں جہاں آپریشن کرکے ریڑھی بانوں کو بے روزگارکیاجاتا ہے، دوسرے دن ہی اُسی جگہ نئے اورمن پسند لوگوں کو بیٹھا دیاجاتاہے اوریہ پریکٹس ہرچھ ماہ بعد کی جاتی ہے۔

غریب دوکانداروں نے وزیراعلیٰ پنجاب، ڈپٹی کمشنرجہلم سے مطالبہ کیاہے کہ ہمیں مستقل طورپر کوئی متبادل جگہ روزگار کے لیے فراہم کی جائے اس طرح کہ آئے روز آپریشن سے نہ صرف ہم بے روزگار بلکہ مقروض بھی ہوجاتے ہیں اور اگر ناجائز تجاوزات لفظ کی اصلاح کی جائے تواس کامطلب سرکاری زمین پر پختہ عمارت کابن جانا یاچاردیواری بنا دیناہوتاہے عارضی طورپر لگے ریڑھی ،ٹھیلے جوکہ بلدیہ کوپرچی بھی دیتے ہیں ناجائز تجاوزات کے زمرے میں نہیں آتے ۔

اس موقع پراسسٹنٹ کمشنر عمبر گیلانی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ کسی بھی دکاندار کی روزی روٹی کا بند نہیں کیا جائیگا بلکہ تمام دکانداروں اور ریڑھی بانوں کو رجسٹرڈ کر کے انہیں مناسب جگہ فراہم کی جائیگی جس پر تجاوز کرنے والوں کو کوئی رعایت نہ دی جائیگی۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button