جہلم پریس کلب کا ماہانہ اجلاس، صحافیوں کے ساتھ ڈاکٹرز کے نامناسب رویے کی مذمت

0

جہلم: جہلم پریس کلب کا ماہانہ اجلاس پریس کلب کی عمارت میں منعقد ہوا، اجلاس کا آغاز تلاوت کلام پاک سے کیا گیا،نعت کی سعادت سیدناصر حسین شاہ نے حاصل کی۔

اجلاس میں سول ہسپتال کے ڈاکٹرز کا صحافیوں کے ساتھ نامناسب رویے کہ خلاف اتفاق ِ رائے سے قرار دادِ مذمت منظور کی گئی اور ڈپٹی کمشنر جہلم سے مطالبہ کیا گیا کہ سول ہسپتال کے معاملات کو یرغمال بنانے والے ڈاکٹرز کے خلاف کارروائیاں کی جائیں تاکہ سرکاری ہسپتال میں آنے والے مریضوں کو صحت کی سہولتیں میسر آسکیں۔

صحافیوں نے کہا کہ سرکاری ہسپتال کے ڈاکٹروں نے ہسپتال کے اندر تنظیمیں بنا رکھی ہیں ،ڈاکٹرز ایک دوسرے کو تحفظ فراہم کرنے کے لئے حقائق کو چھپا کرڈاکٹرز کو تحفظ دیتے ہیں، سرکاری ڈاکٹروں نے ہسپتال کے باہر پرائیویٹ کلینک قائم کررکھے ہیں آن کال ڈاکٹرز مریضوں کو چیک کرنے کی بجائے اپنے پرائیویٹ کلینکوں پر مریضوں کو چیک اپ کرکے بھاری فیسیں وصول کرتے ہیں ، آن کالز ڈاکٹرز ہسپتال میں مریضوں کو چیک کرنا اپنی توہین سمجھتے ہیں ۔

گزشتہ روز سرکاری ہسپتال کے اندر ڈاکٹروں نے ڈیوٹی اوقات کے اندر اجلاس طلب کرکے مریضوں اور ان کے لواحقین کا جس طرح مذاق اڑایا ماضی میں اس کی مثال نہیں ملتی ، ایک مخصوص گروہ نے انتظامیہ کو دھمکی دی کہ اگر ہمارے معطل اور برخاست کئے گئے ہاؤس آفیسراور ڈاکٹرز کو بحال نہ کیا گیا تو ڈاکٹرہڑتال پر چلے جائیں گے۔ اس طرح 1 گھنٹہ سے زائد ضلع جہلم کی چاروں تحصیلوں سے آنے والے مریض ڈاکٹروں کے دروازوں کے باہر تڑپتے رہے لیکن کسی مسیحا نے اس دوران مریضوں کو چیک کرنے کی ضرورت محسوس نہ کی۔

صحافیوں نے ڈپٹی کمشنر جہلم سے مطالبہ کیاہے کہ سول ہسپتال کا ماحول خراب کرنے والے ڈاکٹرز کو تبدیل کیا جائے تاکہ دور دراز سے آنے والے صحت کی سہولت سے مستفید ہو سکیں۔ اجلاس میں نجی ٹی وی چینل کے رپورٹرمرزا محمد وسیم بیگ شہیدکے درجات کی بلندی کے لئے دعا کی گئی اور ڈی پی او گجرات سے مطالبہ کیا گیا کہ 5 روز گزرنے کے باوجود ملزمان کا گرفتار نہ ہونا سوالیہ نشان ہے۔

جہلم پریس کلب کے صحافیوں نے سرائے عالمگیر پریس کلب کے عہدیداران و ممبران کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ سرائے عالمگیر پریس کلب کے عہدیدار جب بھی کال دیں گے جہلم کے صحافی سرائے عالمگیر کے صحافیوں کے شانہ بشانہ کھڑے ہونگے ، اس موقع پر پریس کلب اور صحافیوں کی فلاح و بہبود کے لئے کام جاری رکھنے کا عزم کیا گیا ، اجلاس کے اختتام پر معروف عالم دین سید عطاء اللہ شاہ بخاری نے امام عالی مقام حضرت امام حسین کی حیات ِ طیبہ پر روشنی ڈالی ۔

اس موقع پر راجہ جہانزیب خان ، راجہ نوبہار خان، سید اکرم حسین شاہ ، عمیر احمدراجہ ، چوہدری مہربان حسین ، بابر راجپوت، نجف شہزاد، غلام قادر مخلص، ملک انجم یوسف ، عبدالغفارآزاد، چوہدری محمد ریاض گوندل ، مرزا کفیل بیگ، عامرکیانی ، مرزا راحیل بیگ، مرزاقدیر بیگ، شیخ عتیق الرحمن،خالق تنویر ، امجد ضیاء، سید ناصرحسین شاہ،قاسم سجاد، چوہدری ظفرنور، الیاس صادق وٹو، سہیل کیانی ، محمد وسیم قریشی،نصیر احمد،مظفر اقبال انصاری، مرزا جویر اقبال ،سید امیر حسین شاہ سمیت دیگر بھی موجود تھے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.