بی ایچ یو پھلڑے سیداں کے انچارج نے لیڈی ہیلتھ ورکرز کو ایک ہفتہ کے لیے لائن حاضر کر لیا

0

پڑی درویزہ: بی ایچ یو پھلڑے سیداں کے میڈیکل آفیسر انچارج نے لیڈی ہیلتھ ورکرز کو ایک ہفتہ کے لیے لائن حاضر کر لیا، یہ ایک غیر متعلقہ کاروائی ہے ، لواحقین ۔ میں نے کسی کو پابند نہیں کیا میڈیکل آفیسر کی حقائق سے چشم پوشی، سی ای او ڈسٹرکٹ ہیلتھ اتھارٹی ضلع جہلم سے نوٹس لینے کا مطالبہ ۔

تفصیلات کے مطابق یونین کونسل پھلڑے سیداںمیں بنیادی مرکز صحت کے میڈیکل آفیسر انچارج نے لیڈی ہیلتھ سپروائزر کی شکایت پر نیشنل پروگرام برائے خاندانی منصوبہ بندی و بنیادی صحت (NP for FP&PHC)کی تین لیڈی ہیلتھ ورکرز کو ایک ہفتہ کے لیے اس بات پر پابند کر لیا ہے کہ وہ ہر صبح پہلے 10سے 15کلو میٹر کا سفر کر کے بنیادی مرکز صحت آئیں گی اور بعد میں اپنی متعلقہ فیلڈ میں ’’ماں اور بچے کے ہفتے ‘‘کے حوالے سے اپنی ڈیوٹی بھی سرانجام دیں گی۔ اس صورت حال کی وجہ یہ بتائی گئی کہ لیڈ ی ہیلتھ سپروائزر نے میڈیکل آفیسر کو چند معمولی کوتاہیوں کی اطلاع کی تھی۔معافی نامے لکھوائے گئے اور میڈیکل آفیسر کی طرف سے متاثرہ لیڈی ہیلتھ ورکرز کو خبردار کیا گیا کہ اگر یہ بات لیک ہوئی تو مزید کاروائی ہو گی ۔

مذکورہ صورت حال کے متعلق جب بنیادی مرکز صحت پھلڑے سیداں کے میڈیکل آفیسر انچارج ڈاکٹر علی ارشد سے رابطہ کر کے وضاحت طلب کی گئی تو موصوف نے فوری طور پر حقائق سے چشم پوشی کرتے ہوئے مکمل طور پر انکار کر دیا کہ انہوں نے کسی LHWکو بی ایچ یو آنے کے لیے پابند نہیں کیا نہ ان کا ایسا کوئی اختیار ہے حالآنکہ گزشتہ تین روز سے تینوں لیڈی ہیلتھ ورکرز باقاعدگی سے صبح بنیادی مرکز صحت حاضر ہو رہی ہیں ۔

متاثرہ LHWsکے لوائقین نے صحافیوں کو بتایا کہ مذکورہ ملازمین کی اصل ذمہ دار صرف او ر صرف لیڈی ہیلتھ سپروائزر ہیں جبکہ میڈیکل آفیسر کا اس محکمہ سے کوئی تعلق نہیں ہے اس لیے نئے میڈیکل آفیسر کی طرف سے غیر متعلقہ احکامات کا نشانہ بننے والی LHWsکے لوائقین نے چیف ایگزیکٹو آفیسر ڈسٹرکٹ ہیلتھ اتھارٹی ضلع جہلم سے از خود نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے تاکہ ہر سرکاری ملازم اپنی حدود میں ڈیوٹی کرے ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.