جہلم

طلبہ مسلسل گھروں میں بند رہنے سے ٹی وی ، کمپیوٹر اور موبائل فونز پر فلمیں دیکھ کر وقت گزارنے لگے

جہلم: طلبہ مسلسل گھروں میں بند رہنے سے ٹی وی ، کمپیوٹر اور موبائل فونز پر فلمیں دیکھ کر وقت گزارنے لگے، بچوں و بڑوں میں چڑچڑے پن میں اضافہ ہونے لگا۔ چھوٹی چھوٹی باتوں پر جھگڑے ،بچوں کے شور شرابے سے گھر کے افراد پریشان ، بیشتر گھروں میں لڑائی جھگڑوں میں اضافہ ہوگیا۔

تفصیلات کے مطابق گزشتہ 2 ماہ سے زائدعرصہ میں بچوں کاگھر وںمیں بند رہنے کی وجہ سے ہر کسی کے مزاج میںچڑچڑے پن میں ہر گزرتے دن کے ساتھ اضافہ ہورہاہے ۔ بچوں کے شور شرابے سے بھی گھر کے افراد پریشان ہیں۔ ایسے میں بیشتر گھروں میں لڑائی جھگڑوں میں اضافہ ہوچکا ہے بچے زیادہ تر وقت ٹی وی ، کمپیوٹر اور موبائل فونز پر فلمیں دیکھ کر گزاررہے ہیں۔

شہریوں کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ تعلیمی ادارے ، سکولز ، اکیڈمیز، اور ٹیوشن سنٹرز بند ہونے سے بچوں میں منفی سرگرمیاں پروان چڑھنے لگی ہیں ، مسلسل گھروں میں بند رہنے سے ٹی وی ، کمپیوٹر اور موبائل فونز پر فلمیں ، کارٹونز، گیمز ، کہانیاں دیکھ کروقت گزاررہے ہیں ، جس سے ان کے اندر کئی طرح کی نفسیاتی تبدیلیاں پیدا ہورہی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بڑی کلاسوں کے بچے جوکہ اکثر گھروں سے باہر گلی محلوں میں صبح سے لیکر رات گئے تک آوارہ گھومتے ہیں لڑائی جھگڑوں کے واقعات میں بھی اضافہ ہوا ہے ۔لاک ڈاؤن کے باعث بچوں کا مستقبل مخدوش ہونے کا خطرہ لاحق ہو چکا ہے جو کہ والدین کے لئے لمحہ فکریہ ہے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close