قرآن و حدیث کی بنیادی تعلیم اور جدید تعلیم کا ملاپ ہی بنیادی ضرورت ہے۔ ڈاکٹر ذاکر نائیک

0

کھیوڑہ/ کوالالمپور: قرآن و حدیث کی بنیادی تعلیم اور جدید تعلیم کا ملاپ ہی بنیادی ضرورت ہے نوجوان نسل کے روشن مستقبل کے لیے سکولوں میں جدید تعلیم کے ساتھ اسلامی تعلیمات ناگریز ہیں۔ ڈاکٹر ذاکر نائیک معروف عالمی سکالر نے دارارقم سکولز کے وفد یاسین خان منیجنگ ڈائریکٹر پاکستان ودیگر سے ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔
تفصیلات کے مطابق ملائشیا میں معروف مذہبی سکالر ڈاکٹر ذاکر نائیک کی رہائش گاہ پر پاکستان سے دارارقم سکولز کے منیجنگ ڈائریکٹر پاکستان یاسین خان کی قیادت میں وفد میں ملاقات کرنے والی شخصیات میں ریجنل ڈائریکٹر دارارقم سکولز پاکستان عمران مرزا حافظ ساجد اقبال حافظ اعجاز الحق انجینئر یحی عبدالعزیز عامر اقبال شیخ سید اشعر جعفری شہزاد چیمہ سہیل بشیر چوہدری محمد شوکت حافظ نور الٰہی ڈاکٹر امتیاز شیخ اور رضوان سعید شامل تھے۔
اس ملاقات کے دوران ڈاکٹر ذاکر نائیک نے مہمانوں کو ویلکم کیا اور گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ تعلیم وہ ہوتی ہے جس کا مقصد دونوں جہانوں میں کامیابی ہو نوجوان نسل کی تعلیم و تربیت کی ذمہ داری تعلیمی اداروں پر ہے اور انھیں چاہیے کہ احسن انداز میں ادا کریں دارارقم سکولز کے شعبہ حفظ و دیگر سرگرمیوں کی تحسین کی اور ذمہ داران کو جدید تعلیم کو اسلامی تعلیمات سے ہم ا ہنگ کرنے کی طرف دیگر تعلیمی اداروں کو بھی متوجہ کرنی چاہیے۔
انہوں نےکہا کہ قرآن مجید رہتی دنیا کے لیے ہدایت اور کامیابی کا ذریعہ ہے اور اس میں تمام قدیم اور جدید مسائل کا حل موجود ہے دارارقم سکولز کی وفد نے ملاقات کے دوران ڈاکٹر ذاکر نائیک کو تحائف پیش کیے ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.