پنڈدادنخاناہم خبریں

تحصیل پنڈدادنخان کے شہری ترقی یافتہ دور میں کشتیوں پر سفر کرنے پر مجبور

پنڈدادنخان: تحصیل پنڈدادنخان کے شہری ترقی یافتہ دور میں کشتیوں پر سفر کرنے پر مجبور، 8 ماہ کا عرصہ گزرنے کے باوجود ریلوے وکٹوریہ پل سے ملحقہ راستہ موٹر سائیکل سواروں کے لئے نہ کھل سکا، تحصیل پنڈدادنخان اور ملکوال کے سینکڑ وں افراد روزانہ کشتیوں پر موٹر سائیکل رکھ کر دریا عبور کرنے پر مجبو ر ، ضلع جہلم ، ضلع منڈی بہاؤالدین ، ضلع سرگودھا کے ہزاروں افراد نے چیف جسٹس آف پاکستان ، وفاقی وزیر ریلوے ، ڈی ایس ریلوے راولپنڈی سے مطالبہ کیا ہے کہ وکٹوریہ پل پر آمدورفت کے لئے اور موٹر سواروں کو گزرنے کی اجازت دی جائے۔

تفصیلات کے مطابق تحصیل تحصیل پنڈدادنخان اور تحصیل ملکوال کے درمیان دریائے جہلم پر واقع چک نظام کے مقام پر ریلوے وکٹوریہ پل پر بنایا گیا، پیدل و موٹر سائیکل سواروں کا راستہ پچھلی کئی دہائیوں سے قائم ہے جہاں روزانہ کی بنیاد پر ضلع جہلم ، ضلع منڈی بہاؤالدین ، ضلع سرگودھا سے تعلق رکھنے والے سینکڑوں شہری روزانہ کی بنیاد پر وکٹوریہ پل کے ذریعے دریائے جہلم عبور کرتے تھے۔

8 ماہ قبل عید الفطر کے موقع پر پل سے گزرنے کے دوران غریب وال کی رہائشی بچی دوران سفر پشتہ نہ ہونے کے باعث دریا میں گر کے جاں بحق ہوگئی تھی، جس پر علاقہ مکینوں نے پشتے نہ ہونے کی وجہ سے پر امن احتجاج ریکارڈ کروایا محکمہ ریلوے کو شہریوں کو سہولت فراہم کرنے کی بجائے گزرگاہ کو بیئریر لگا کر مکمل بند کر دیا جس کی وجہ سے روزانہ درجنوں موٹر سائیکل سوار موٹر سائیکلیں کشتیوں پر رکھ کے دریا عبور کرنے پر مجبور ہیں ۔

علاقہ مکینوں نے چیف جسٹس آف پاکستان ، وفاقی وزیر ریلوے ، ڈی ایس ریلوے راولپنڈی سے مطالبہ کیا ہے کہ وکٹوریہ پل پر آمدورفت کے لئے نئے پشتے نصب کرکے موٹر سواروں اور پیدل چلنے والوں کے لئے راستہ کھولا جائے تاکہ شہری انگریز دور کے وقت دی جانے والی سہولت سے بھرپور فائدہ اٹھا سکیں ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button