جی ٹی روڈ پر تعینات موٹر وے پولیس کے افسران واہلکاروں نے شہریوں کی ناک میں دم کر دیا

0

جہلم: جی ٹی روڈ پر تعینات موٹر وے پولیس کے افسران واہلکاروں نے شہریوں کی ناک میں دم کر دیا، پہلے سلام پھر کلام کے بجائے، پہلے چالان پھر کلام کو اپنا سلوگن بنا لیا۔ موٹر وے پولیس کے افسران نے جہلم جی ٹی روڈ سے گزرنے والے موٹر سائیکل سواروں اور رکشہ ڈرائیوروں کے لئے دوہرا قانون متعارف کرارکھا ہے۔

بغیر ہیلمٹ کے موٹر سائیکل سواروں کو جرمانہ اور بااثر افراد کے ٹیلیفون پر موٹر سائیکل سواروں کو ریلیف مہیا کرنا بھی اپنے فرائض منصبی میں شامل کر رکھا ہے جبکہ جی ٹی روڈ کے عین وسط میں چنگ چی رکشے اور ون ویلنگ کرنے والوں کو ہر طرح کی چھوٹ دے رکھی رہے جس کی وجہ سے جی ٹی روڈ جہلم تا مسہ کسوال روزانہ کی بنیاد پر حادثات کا رونما ہونا معمول بن چکا ہے۔

اس حوالے سے جی ٹی روڈ پر سفر کرنے والے شہریوں کا کہنا ہے کہ جی ٹی روڈ پر جہلم تا مسہ کسوال تک موٹر وے پولیس نے 2 قسم کے الگ الگ قانون لاگو کررکھے ہیں غریب اور سفید پوش طبقہ کے لئے الگ جبکہ بااثر افراد کے لئے الگ کیٹیگری متعارف کروارکھی ہے ، بغیر ہیلمٹ کے سفر کرنے موٹر سائیکل سواروں کو جرمانے جبکہ بااثر افراد کے چہیتوں پر خصوصی نوازشات موٹر وے پولیس نے اپنا طرہ امتیاز بنا لیا ہے ۔

قابل ذکر امر یہ ہے کہ جادہ لاہور موڑ، جی ٹی روڈ وہتاس چوک میں بااثر ٹرانسپورٹرز سڑکوں پر گاڑیاں کھڑی کرکے سواریاں اتارتے اور بٹھاتے ہیں ، جس کی وجہ سے اکثر وبیشتر جی ٹی روڈ پر ٹریفک جام ہو جاتی ہے ، اور حادثات بھی رونما ہوتے ہیں۔

جہلم کے شہریوں نے آئی جی موٹر وے پولیس سے مطالبہ کیا ہے کہ جہلم جی ٹی روڈ پر تعینات موٹر وے پولیس کے افسران و اہلکاروں کو ایک قانون لاگو کرنے کا پابند بنایا جائے تاکہ قانون شکن موٹر سائیکل سواروں اور رکشہ ڈرائیوروں کے خلاف مساوی کارروائی ہو سکے ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.