جہلم

کوڑے کرکٹ کو آگ لگانا قانوناً جرم بھی ہے اور اخلاقی پستی کا مظہربھی۔ شہری حلقے

جہلم: کوڑے کرکٹ کو آگ لگانا قانوناً جرم بھی ہے اور اخلاقی پستی کا مظہربھی،ضرورت اس امر کی ہے کہ کوڑا کرکٹ کو آگ لگا کر ماحول میں آلودگی پیدا کرنیوالوں کیخلاف محکمہ ماحولیات سخت کارروائی کرے، میونسپل کمیٹی کے سینٹری ورکرز کوڑا کرکٹ کو آگ لگا کر ماحولیاتی آلودگی کو فروغ دے رہے ہیں جو لمحہ فکریہ ہے۔

ان خیالات کا اظہار کریم پورہ کے رہائشیوں محمد انور، معصوم اصغر میر، محمد منور حسین، محمد عمران انور، محمد صائم، طحہ منور و دیگر رہائشیوں نے اخبار نویسوںسے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ جہلم شہر کے علاقہ کریم پورہ سمیت گردونواح کے علاقوں جن میں بلال ٹاؤن، محلہ اسلامیہ سکول، محمودہ آباد،اسلام پورہ، جادہ، کالا گجراں، اندرون شہر سمیت دریا جہلم کے کنارے سینٹری ورکرز گندگی کوڑے کرکٹ کے ڈھیر آبادیوں سے باہر منتقل کرنے کی بجائے ڈھیروں پر ہی آگ لگا دیتے ہیں جس سے نہ صرف ما حولیاتی آلودگی پھیل رہی ہے بلکہ سانس و آشوب چشم کے موذی امراض بھی جنم لے رہے ہیں۔ ضلعی انتظامیہ کی اس طرف توجہ نہ ہونے کی وجہ سے ماحول میں زبردست آلودگی پھیل رہی ہے، اس کی بڑی وجہ میونسپل کمیٹی کی انتظامیہ ہے جو بروقت ان علاقوں سے کوڑا کرکٹ نہیں اٹھاتے۔

ان کا مزید کہنا ہے کہ جس طرح ڈینگی مہم کی طرح سیمینار و آگاہی مہم چلائی گئی تھی اسی طرح کوڑا کرکٹ کو پھیلانے اور آگ لگانے کے باعث پھیلنے والی ماحولیاتی آلودگی کے بارے بھی آگاہی مہم چلائی جائے جس سے لاشعور افراد کو اس کے متعلق ان میں شعور اجاگر ہو سکے جو اکثر گلی محلوں، میدانوں، سڑکوں کے ساتھ، تعلیمی اداروں کی دیواروں کیساتھ کوڑے کرکٹ کو آگ لگا کر بچوں بڑوں کو بیماریوں میں مبتلا کر رہے ہیں، صفائی نصف ایمان ہے لیکن مساجد اور تعلیمی اداروں کی دیواروں کیساتھ کوڑا کرکٹ کے ڈھیر لمحہ فکریہ ہیں۔

میونسپل کمیٹی کو بھی اس بارے سنجیدہ ہونا ہو گا جن کے اہلکار و سینٹری ورکرز وقت کے ساتھ ان جگہوں سے کوڑا کرکٹ نہیں اٹھاتے، ان کے ساتھ ساتھ عوام کو بھی چاہیئے کہ اس سلسلہ میں اپنا کردار ادا کریں اور صفائی کا خاص خیال رکھیں۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button