جہلماہم خبریں

پی ایم اے جہلم کے انتخابات، 8 دسمبر کو ڈاکٹر عمل گروپ اور ڈاکٹرز پیس پینل کے مابین کانٹے دار مقابلہ ہو گا

جہلم: پی ایم اے کے انتخابات 2020-2021 میں ڈاکٹر عمل گروپ جس کی قیادت صدر پی ایم اے ڈاکٹر حفیظ الرحمن اور ڈاکٹر ز پیس پینل کی قیادت ڈاکٹر تفسیر گوندل کر رہے ہیں دونوں گروپوں نے اپنے امیدواروں کا اعلان کردیا ہے۔
ڈاکٹرز عمل گروپ کی جانب سے صدر کے لیے ڈاکٹر حفیظ الرحمن جبکہ ڈاکٹر تفسیرگوندل ڈاکٹرز پیس پینل کی طرف سے انتخاب میں حصہ لے رہے ہیں اسی طرح سینئر وائس پریزیڈنٹ ڈاکٹر ارشد علی تنیو کا مقابلہ ڈاکٹر شہزانہ امتیاز جنرل سیکرٹری کے لیے ڈاکٹر شیباء اکرم ہاشمی کا مقابلہ ڈاکٹر باسط الطاف جوائنٹ سیکرٹری کے لیے ڈاکٹر ارشد غنی کا مقابلہ ڈاکٹر سویرا بخاری سے ہو گا۔
کلینیکل سیکرٹری کے لیے ڈاکٹر عدنان نجب کا مقابلہ ڈاکٹر فواد مجید چوہدری، فنانس سیکرٹری کے لیے ڈاکٹر عامر سلطان کا مقابلہ ڈاکٹر طاہر عتیق چغتائی جبکہ انفارمیشن سیکرٹری کے لیے ڈاکٹر زیشان صدیق کا مقابلہ ڈاکٹر عثمان شاہد سے ہوگا۔
اسی طرح پراوینشل کونسلرز کے لیے ڈاکٹر عباس علی،ڈاکٹر ابوذر اعظم، ڈاکٹر ہارون علی وائیں، ڈاکٹر میجر عذراء پروین، ڈاکٹر مشتاق احمد،ڈاکٹرنصیر احمد، ڈاکٹر ساجد علی ڈوگہ کا مقابلہ ڈاکٹر جواد احمد، ڈاکٹر مائرہ گل،ڈاکٹر مدثر ذوالفقار، ڈاکٹر ثمن احمد، ڈاکٹر عظمی مظہر، ڈاکٹر وحید کامران، ڈاکٹر ذوالفقار علی کے ساتھ ہوگا۔
اسی طرح سینٹرل کونسلرز کے لیے ڈاکٹر غلام احمد، ڈاکٹر حرا احمد، ڈاکٹر روداب عرفان مجید، ڈاکٹرسید انور، ڈاکٹر سرمد حفیظ، ڈاکٹر شاہدہ ارشد، ڈاکٹر توقیر ارشد کا مقابلہ ڈاکٹر عبیر قمر،ڈاکٹر عبداللہ گوندل،ڈاکٹر علی حیدر چوہدری،ڈاکٹرفہیم العزیز منہاس، ڈاکٹر محمد طاہر، ڈاکٹر شہناز شاہد، ڈاکٹر عمیر طارق مرزا اسی طرح ایگزیکٹو ممبران کے لیے ڈاکٹر عتیق الرحمن، ڈاکٹرفرحان بشیر، ڈاکٹر منیر اعظم، ڈاکٹر نوشیرواں اعظم، ڈاکٹر سید زبیر یونس، ڈاکٹر طارق محمود، ڈاکٹر ظہور الحق کیانی کا مقابلہ ڈاکٹر عبدالغفور ملک، ڈاکٹر عبدالمجید چوہدری، ڈاکٹر اعجاز احمد شیخ، ڈاکٹر محمد ارشد کیپٹن، ڈاکٹرمحمد قاسم، ڈاکٹر ریاض احمد قمر میجر، ڈاکٹرشاہد تنویر ان انتخابات میں ایک دوسرے کے مقابل ہیں۔
ڈاکٹرز عمل گروپ اور ڈاکٹرز پیس پینل کے مابین کانٹے دار مقابلے کی توقع ہے کیونکہ موجودہ صدر پی ایم اے ڈاکٹر حفیظ الرحمن اس سے قبل تین بار پی ایم اے کے انتخابات جیت کر صدر منتخب ہوتے آئے ہیں جبکہ ان انتخابات میں 665 ڈاکٹرز اپنے حق رائے دہی کا استعمال کریں گے اور دونوں گروپوں کے ڈاکٹرز انتخابات کے لیے کنویسنگ میں مصروف عمل ہیں 8 دسمبر کو ہی انتخابات کے نتائج آنے کے بعد معلوم ہوگا کہ فتح کس گروپ کا مقدر ہوگی۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button