جہلم

محکمہ سوئی نادرن گیس کی جانب سے جہلم میں گیس کی بندش کا سلسلہ موسم کی تبدیلی کے باوجود کم نہ ہو سکا

جہلم: محکمہ سوئی نادرن گیس کی جانب سے گیس کی بندش کا سلسلہ موسم کی تبدیلی کے باوجود کم نہ ہو سکا جبکہ ایل پی جی ڈیلرز کی ملی بھگت شہر بھر میں ایل پی جی گیس تاریخ کی بلند ترین سطح پر 200روپے کلو سے بھی تجاوز کر گئی۔
تفصیلات کے مطابق جہلم شہرسمیت ملحقہ آبادیوں میں موسم کی تبدیلی کے باوجود گیس پریشر میں بہتری نہ آسکی مختلف محلوں ، آبادیوں میں بتدریج گیس کی لوڈشیڈنگ سمیت پریشر میں کمی کے باعث علاقہ مکینوں کو مسائل کا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔
اس حوالے سے صارفین کا کہنا ہے کہ مختلف علاقوں میں 30 سال قبل جو لائنیں بچھائی گئیں تھی کنکشنوں میں اضافے کے باعث وہ لائنیں اب نا کافی ہو چکی ہیں ، جن علاقوں میں نئی لائنیں بچھائی جارہی ہیں ، وہاں پریشر قدرے بہتر ہے ، گیس کے پریشر میں کمی کا فائدہ اٹھا کر ایل پی جی سلنڈرز فروخت کرنے والے ڈیلرز نے من مرضی کے نرخ مقرر کرکے 200 روپے فی کلوکے حساب سے ایل پی جی فروخت کرکے اٹھا رہے ہیں۔
یہاں یہ امر بھی قابل ذکر ہے کہ ایل پی جی ڈیلرز نے ایک ماہ کے دوران گیس کی قیمتوں میں 100 گنا اضافہ کیا ہے ، لیکن حکومت کی جانب سے مہنگے داموں ایل پی جی فروخت کرنے والے ڈیلرز کے خلاف کسی قسم کی کوئی کارروائی نہیں کی جو کہ سوالیہ نشان ہے ۔
صارفین کا کہنا ہے کہ گیس کی بندش اور پریشر میں کمی کے باوجود گیس کے بھاری بل صارفین کو بھجوا دئیے جاتے ہیں جو محکمہ سوئی گیس کی اپنے صارفین کے ساتھ سخت زیادتی ہے۔
صارفین نے چیف جسٹس آف پاکستان ، وزیر اعظم پاکستان ، وفاقی وزیر پٹرولیم سے نوٹس لینے کا مطالبہ کیاہے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button