جہلم سے دوسرے علاقوں میں چلنے والی بسوں اور ہائی ایس گاڑیوں پر اوورلوڈنگ کا سلسلہ جاری

0

جہلم: شہر سے دوسرے علاقوں میں چلنے والی بسوں اور ہائی ایس گاڑیوں پر اوورلوڈنگ کا سلسلہ نان سٹاپ جاری ۔ٹریفک پولیس کارروائی سے گریزاں۔ٹرانسپورٹ مافیا کی اجارہ داری کے باعث بسوں ، ہائی ایسسز کی چھتوں اور سائیڈوں پرلٹکے مسافر، طالب علم، شہر میں محنت مزدوری کیلئے آنے والے محنت کش ٹریفک پولیس اور ٹرانسپورٹ اتھارٹی کی توجہ کے منتظر ہیں۔

ٹریفک پولیس نے شہریوں اور طلبہ کو ٹرانسپورٹرز کے رحم و کرم پر چھوڑ رکھا ہے،سیکرٹری آر ٹی اے اور ٹریفک پولیس کے اوور لوڈنگ اور زائد کرایہ وصولی پر قابو پانے کے دعوے بھی دھرے کے دھرے رہ گئے، ٹرانسپورٹ اتھارٹی اور ٹریفک پولیس کی لاپرواہی کے باعث روزانہ سینکڑوں طالب علم اور شہری مضافاتی علاقوںسے آنے والی بسوں کی چھتوں پر سفر کر تے دکھائی دیتے ہیں۔شہر کے داخلی و خارجی چوکوں پر تعینات ٹریفک پولیس ٹرانسپورٹ عملہ کے خلاف کارروائی کر نے سے گریزاں نظر آتے ہیں دوسری طرف آر ٹی اے سیکر ٹری بھی اپنی ڈیوٹی نبھاتے دکھائی نہیں دیتے۔

اس وقت جہلم شہر سے مختلف روٹس پر چلنے والی ٹرانسپورٹ پر اوور لوڈنگ کا سلسلہ پورے عروج پر ہے۔دینہ ، پنڈدادنخان، سوہاوہ، سرائے عالمگیر، منڈی بہاوالدین ، کھاریاں ، گجرات، سرگودھا ، چکوال ،راولپنڈی سمیت دیگر شہروں کو جا نے والی مسافر گاڑیوں، بسوں ہائی ایسسز کی چھتوں اور گاڑیوں کے اندر شہریوں اور طالب علموں کو بھیڑ بکریوں کی طرح ٹھونس دیا جاتا ہے۔انتظامیہ شاید اس امر سے بھی آگاہ نہیں کہ کئی گنا زائد کرایہ اداکرنے کے باوجود مسافروں کو گاڑیوں کی چھتوں اور پھٹوں پر بیٹھنے پر مجبور کیا جاتا ہے اور اگر کوئی مسافر پس وپیش کرے تو وحشیانہ تشدد اور گالی گلوچ ٹرانسپورٹ عملے کی معمول کی کارروائی ہے۔

ذرائع کے مطابق گزشتہ چند سالوں کے دوران بسوں کی چھتوں سے گر نے کے باعث متعدد مسافر موت کا شکار ہوچکے ہیں لیکن ان مسافروں کی ہلاکت بھی ٹریفک پولیس اور روڈ ٹرانسپورٹ اتھارٹی کو انکے فرائض یاد نہیں دلا سکی۔ اس سلسلے میں جب آ ر ٹی اے سیکر ٹری سے رابطہ کرنے کی کوشش کی گئی تو عملے نے بتایا کہ صاحب چیکنگ کے سلسلہ میں علاقہ میں گئے ہوئے ہیں۔افسوسناک امر یہ ہے کہ افسران کے بلند بانگ دعوے کبھی عملی صورت اختیار نہیں کر پاتے۔

پچھلے چندماہ میں وزیر اعلیٰ پنجاب ، پنجاب روڈ ٹرانسپورٹ اتھارٹی صوبہ پنجاب کے 36 اضلاع کے کروڑوں شہریوں کو کرایوں میں کمی کے حوالے سے بلند وبانگ دعوے کرتے رہے لیکن ضلعی انتظامیہ نے وزیر اعلیٰ پنجاب اور پنجاب روڈ ٹرانسپورٹ اتھارٹی کے احکامات کو ہوا میں اڑاتے ہوئے شہریوں تک حکومتی ریلیف نہ پہنچے دیا بلکہ ٹرانسپورٹرز کی پشت پناہی کر کے ثابت کیا کہ وطن عزیز میں افسر شاہی جو چاہے وہ کرے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.