دینہاہم خبریں

رورل ہیلتھ سنٹر دینہ عوام کو طبی سہولیات دینے میں مکمل طور پر ناکام

دینہ: آر ایچ سی دینہ عوام کو طبی سہولیات دینے میں مکمل طور پر ناکام ،اسپیشلسٹ ڈاکٹروں کی کمی نے عوام کو ڈسٹرکٹ ہیڈ کواٹر ہسپتال جہلم کے چکر لگانے پر مجبور کر دیا،نہ ایکسرے سہولیات ،نہ لیب کی کوئی سہولت میسر ،آر ایچ سی کے پاس ایمرجنسی کی صورت میں کوئی ایمبولینس موجود نہیں، ایک ڈاکٹر وہ بھی اسپیشلسٹ نہیں جس کو رات 12گھنٹے ڈیوٹی دینے کے باوجود صبح 6گھنٹے مزید ڈیوٹی سر انجام دینا پڑتی ہے ،عوام الناس کا ڈپٹی کمشنر جہلم سے آر ایچ سی کو تحصیل ہیڈ کواٹر کا درجہ دینے اور سہولیات کی دستیابی کا مطالبہ۔

تفصیلات کے مطابق دینہ کی عوام طبی سہولیات سے یکسر محروم ہیں ،آر ایچ سی دینہ میں کوئی بھی اسپیشلسٹ ڈاکٹر موجود نہیں ہے جس کی وجہ سے عوام کو ڈسٹرکٹ ہیڈ کواٹر ہسپتال جہلم کا رخ کرنا پڑتا ہے،ایمرجنسی کی شکل میں بڑے کیس جیسے ہیڈ انجری ہو یا فریکچر وغیرہ کے لیے ایکسرے تک کی سہولت میسر نہیں اور مریض کو مجبورا جہلم ریفر کرنا پڑتا ہے۔

مریضوں کے ٹیسٹ کے لیے جدید لیب کی ضرورت ہے جو کہ یہاں میسر نہ ہونے کی وجہ سے عوام کو پرائیویٹ لیب سے ٹیسٹ کرانے پڑتے ہیں جو کہ مہنگے ہونے کی وجہ سے عوام کی پہنچ سے دور ہیں ،سٹی سکین ،ایم آر آئی کی سہولت بھی میسر نہیں ہے،ایمر جنسی مریضوں کے لیے ہسپتال میں اپنی کوئی ایمبولینس موجود نہیں ہوتی جس کی وجہ سے ریسکیو 1122جہلم کال کرنا پڑتی ہے جو کہ دیر ہو جانے کی وجہ سے کئی بار مریض اپنی جان کی بازی ہار چکے ہیں۔

اسپیشلسٹ ڈاکٹروں کی شدید کمی ہے ،مریضوں کو مجبوراً اسپیشلسٹ ڈاکٹر نہ ہونے کی وجہ سے جہلم جانا پڑتا ہے جو کہ دینہ کی عوام کے ساتھ سرا سر نا انصافی ہے،رات کی شفٹ میں صرف ایک ڈاکٹر کام کر رہا ہوتا ہے جس کو دن میں دوبارہ 6گھنٹے دوبارہ ڈیوٹی سر انجام دینا ہوتی ہے،ایک ہی ڈا کٹر ایمرجنسی بھی ڈیل کرتا ہے اور او پی ڈی کو بھی اسی نے سنبھالنا ہو تا ہے ،ڈاکٹروں کی رہائش گاہیں ویرانے کا منظر پیش کر رہی ہیں جہاں ایسے معلوم ہوتا ہے کہ یہ بھوت بنگلے ہوں۔

دینہ کی عوام سے یہ وعدہ کیا گیا تھا کہ آر ایچ سی کو تحصیل ہیڈ کواٹر کا درجہ دے دیا جائے گا اور میاں شہباز شریف باقاعدہ اس کا اعلان بھی کر کے گئے تھے لیکن بدقسمتی دینہ کی عوام طبی سہولیات سے مکمل طور پر محروم ہے ،تحصیل ہیڈ کوا ٹر کا درجہ ملنے سے مریضوں کے لیے علیحد ہ وارڈز اور بیڈ زکی تعداد میں بھی اضافہ ممکن ہے جبکہ اس وقت بستروں کی تعداد کم ہونے کی وجہ سے مریضوں کو جہلم ریفر کرنا پڑتا ہے۔

عوام الناس نے ڈپٹی کمشنر جہلم سے مطالبہ کیا ہے کہ آر ایچ سی دینہ کو تحصیل ہیڈ کواٹر کا درجہ دیا جائے اور یہاں تمام بنیادی سہولیات مریضوں کو مہیا کی جائیں ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button