جہلم

واقعہ کربلا کی عظیم قربانی صدیاں گزرنے کے باوجوداپنی تروتازگی برقرار رکھے ہوئے ہے، سید عطاء اللہ شاہ بخاری

جہلم (سلطان رضوی سے) امام حسین ؑنے 10محرم الحرام 61ھ کو جو عظیم قربانی دی اس واقع کو کئی صدیاں گزر گئیں مگر یہ آج بھی اپنی تروتازگی برقرار رکھے ہوئے ہے۔

ان خیالات کا اظہار جید عالم دین علامہ سید عطاء اللہ شاہ بخاری نے شہادت امام حسین ؑ کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ آزادی کے متوالوں، ظلم سے ٹکرانے والوں، حق کا پرچم بلند کرنے والوں، امر بالمعروف ونہی ازمنکر کا پرچم تھامنے والوں اور غلامی کی زندگی پر موت کو ترجیح دینے والوں کے لیے کربلا آج بھی مشعل راہ ہے۔ تحریک کربلا ہر مذہب ومسلک اور زندگی کے ہرشعبے کے افراد کے لیے یکساں رہنمائی فراہم کرتی ہے۔

ان کا کہنا تھا اس تحریک میں چھ ماہ کے بچے سے لیکر اسی سال کے بوڑھے تک اور پاکبازخواتین کے تاریخ ساز کردار سے صفحات بھرے پڑے ہیں۔ غیر مذہب اور جاہل معاشرہ میں جو جانوروں کے پانی پینے پلانے پر طویل جنگوں میں مصروف رہتے تھے وہ بھی اس ماہ میں جنگ نہیں کرتے تھے۔اسلامی دنیا میں محرم کی اہمیت واقعہ کربلا کی وجہ سے زیادہ ہوگئی۔

انہوں نے کہا کہ حضرت امام حسین ؑ کو نے کربلا میں یزید کو ہی نہیں قیامت تک ہر یزیدی کردار کو شکست دی کربلا میں بلا شبہ دو کرداروں کی جنگ ہوئی تھی ،حق و باطل کے معرکے کا نام کربلا ہے ،آپ ؑنے 10محرم الحرام 61 ھ مطابق ستمبر680ء میںشہادت پائی۔حضرت حسین کے ساتھ 72آدمی شہید ہوئے ان میں سے بیس خاندانِ بنی ہاشم کے چشم و چراغ تھے جس دن حضرت امام حسین شہید ہوئے اس دن سورج گرہن ہوگیا اور حضرت امام حسین کی شہادت پر انسانوں کے ساتھ ساتھ جنات بھی روئے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button