جہلم

2019ء کا سورج بھی غروب ہونے کے قریب مگر جہلم کی تقدیر نہ بدل سکی

جہلم: 2019ء کا سورج بھی غروب ہونے کے قریب مگر شہر کی کی تقدیر نہ بدل سکی ، دہائیوں قبل ضلع کا درجہ پانے والا ضلع جہلم مسائل کی دلدل میں پھنس کر رہ گیا، ٹوٹی پھوٹی سڑکیں ، آلودہ پانی ، کھلے گٹراور گندگی کے ڈھیر کسی غیبی مسیحا کے منتظر ، شہری مسائل کے حل کے لئے دربدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور۔
تفصیلات کے مطابق دہائیوں قبل جہلم کو ضلع کا درجہ تو دے دیا گیا مگر شہر کے باسی بنیادی سہولیات سے تاحال محروم ہیں ،لاکھوں سے زائد کی آبادی والا شہر ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہونے کیوجہ سے اپنی الگ پہنچان رکھتا ہے ،جسے غازیوں ، شہیدوں اور اوورسیز پاکستانیوں کی سرزمین بھی کہا جاتا ہے یہ شہر مسائل کی آماجگاہ بنتا جا رہاہے۔
ٹوٹی پھوٹی سڑکیں گلیاں ، آلودہ پانی ، ناقص سیوریج نظام، تعلیمی اداروں ، ہسپتالوں میں سہولیات کا فقدان ، گلیوں بازاروں میں گندگی و غلاظت کے ڈھیر ، تجاوزات کی بھرمار ، سرکاری اداروں سمیت ریلوے اسٹیشن بھوت بنگلے کی منظر کشی کرنے سمیت ، جنرل بس اسٹینڈ ، اسٹریٹ لائٹس ، فائر بریگیڈ تباہ حال ہوچکے ہیں ،بنیادی سہولیات نہ ہونے کیوجہ شہریوں کو بے شمار مسائل درپیش ہیں ۔
شہریوں نے وزیر اعظم پاکستان عمران خان ، وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار سے مطالبہ کیاہے کہ غازیوں ، شہیدوں اور اوورسیز پاکستانیوں کی سرزمین جہلم کو ترقی یافتہ شہروں کی طرح بنیادی سہولیات فراہم کی جائیں تاکہ شہری حکومت کی جانب سے دی جانے والی سہولیات سے مستفید ہو سکیں ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button