جہلم

ڈسٹرکٹ جیل میں اندھیر نگری چوپٹ راج، ملاقاتیں بند ہونے پر قیدیوں سے رقم کی وصولی شروع

جہلم: ڈسٹرکٹ جیل میں اندھیر نگری ،چوپٹ راج، ملاقاتیں بند ہونے پر قیدیوں سے رقم کی وصولی شروع، عملہ سخت گرمی میں قیدیوں کو زبردستی مشقت پر لگا کر 25ہزار فی کس بٹورنے لگا ، فون بوتھ بھی کمائی کا ذریعہ ، تین سے پانچ منٹ فون کرنے کا ریٹ500روپے مقرر، چیف چکر اور منشی سپرٹنڈنٹ کے وزیر خرانہ مقرر۔

تفصیلات کے مطابق جہلم ڈسٹر کٹ جیل میں کورونا وائرس کی وجہ سے ججز حضرات کے وزٹ بند ہونے کا جیل حکام نے بھر پور فائدہ اٹھانا شروع کر دیا ہے اور جیل کو عقوبت خانے میں تبدیل کر دیا ہے۔

اس حوالے سے انتہائی معتبر ذرائع نے بتایا کہ جیل کے اندر ملاقایتوں سے روزانہ کی بنیادپر بھاری رقم بٹوری جاتی تھی لیکن کورونا وائرس کے باعث ملاقاتیں بند ہونے پر جیل عملہ نے قیدیوں کا بھرکس نکالنے کا سلسلہ شروع کر دیا ہے اور قید بامشقت کے بغیر سزا کاٹنے والوں کو بھی سخت گرمی میں کھیتی باڑی، کچن ، تندور میں تعینات کر کے سزا شروع کر دی ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ چیف چکر اور منشی اس وقت جیل کے وزیر خرانہ بنے ہوئے ہیں جو 25ہزارتک فی قیدی لے کر سخت مشقت سے آزادی کا پروانہ عطا کرتے ہیں دوسری طر ف حکومت کی جانب سے قیدیوں کو فون بوتھ کی سہولت ملنے پر بھی جیل حکام کی روزی کا نیا سلسلہ کھل گیا ہے کہ ہفتے، پندرہ دن بعد گھر وں میں تین سے پانچ منٹ فون کرنے کیلئے 500روپے نذرانہ ادا کرنے کا پابند کیا جاتا ہے کئی بیمار قیدیوں کو بھی سخت ترین مشقت میں ڈال کر رقم دینے پر مجبور کیا جارہا ہے مشقت پر لگائے۔

ایک قیدی نے ذرائع کو بتایا کہ چیف چکر راجہ امین اور منشی سبطین کہتے ہیں کہ سپرٹینڈنٹ نے 25 ہزار سے ایک روپیہ کم نہ کرنے کی زبانی ہدایت کر رکھی ہے جس کی وجہ سے جیل عقوبت خانہ بن گیا ہے۔

ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ پہلے ہر ماہ دو تین بار معزز ججز حضرات جیل کا دورہ کرتے اور قیدیوں کے مسائل معلوم کرکے ان کو حل کرواتے لیکن کورونا وائرس کے باعث ججز حضرات کے وزٹ بند ہونے سے قیدیوں کا کوئی پرسان حال نہیں ہے کچن میں خراب آٹے سے بنی روٹیاں ہی قیدیوں کو دی جارہی ہیں البتہ خرچہ اور نذرانہ دینے والے قیدیوں کو بھر پور پروٹوکول دیا جارہا ہے۔

اس حوالے سے ڈسٹرکٹ جیل کے سپرٹینڈنٹ سے موقف لینے کیلئے رابطہ کیا گیا تو آپریٹر نے کہا کہ سپرٹینڈنٹ جیل سے باہر کسی سے فون پر بات نہیں کرتے ۔

قیدیوں کے اہلخانہ نے بتایاکہ ہم ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ فوری طور پر جیل میں ججز کا ماہانہ دورہ بحال کر وائیں اور آئی جی جیل خانہ جات خفیہ چیکنگ کرکے جیل کے اندر جاری اندھیر نگری کا فوری نوٹس لے کر ذمہ داران کے خلا ف سخت کاروائی کریں ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close