جہلم

جہلم کے پٹوار خانوں میں پٹواریوں کے منشیوں کی فراغت کے بعد سائلین پریشانی کے عالم میں مبتلا

جہلم: لاہور ہائی کورٹ کے فیصلے کے بعد ضلع جہلم کے پٹوار خانوں میں پٹواریوں کے منشیوں کی فراغت کے بعد سائلین پریشانی کے عالم میں مبتلا، پٹواریوں نے دفاتر بند کر دیئے ، سائلین کی مشکلات میں اضافہ ، افسران کی خاموشی سوالیہ نشان بن گئی۔

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائی کورٹ کے احکامات کے کے بعد ضلع جہلم کی چاروں تحصیلوں کے پٹواریوں کے منشیوں پر پرائیویٹ طور پر کام کرنے پر پابندی عائد کردی گئی ہے جس کے فوری بعد چاروں تحصیلوں کے پٹواریوں کے منشیوں کو کام کرنے سے روک دیا گیا ہے ،ان منشیوں کے کام نہ کرنے کیوجہ سے سائلین کی مشکلات میں روز بروز اضافہ ہو رہا ہے ۔

سائلین کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ لاہور ہائی کورٹ کا فیصلہ اپنی جگہ درست ہے ، مگر پٹوار خانوں میں کام کرنے والے منشی پٹوار خانوں میں آنے والے سائلین کی بہتر انداز میں رہنمائی کرتے تھے، مگر ان کی عدم موجودگی کیوجہ سے بیشتر پٹواریوں نے پٹوار خانے کھولنے کی بجائے پٹوار خانوں کو تالے لگا دیئے ہیں ، تاکہ سائلین کی مشکلات میں اضافہ ہو جو کہ سائلین کے ساتھ سراسر زیادتی کے مترادف ہے۔

سائلین نے وزیراعلیٰ پنجاب ، چیف سیکرٹری پنجاب سے مطالبہ کیا ہے کہ دفتری اوقات میں پٹواریوں کو پٹوار خانوں میں رہنے کا پابند بنایا جائے تاکہ سائلین کی مشکلات میں اضافے کی بجائے کمی واقع ہو سکے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button