کھیوڑہ

کھیوڑہ شہر کے ساتھ سوتیلی ماں جیسا سلوک بند کیاجائے۔ مرزا دلدار

کھیوڑہ شہر کے ساتھ سوتیلی ماں جیسا سلوک بند کیاجائے ،کھیوڑہ ضلع جہلم کا دوسرا بڑا شہر ہے اور سب سے زیادہ ریونیو دینے والا شہر ہے پھر بھی اس کے ساتھ ایسا سلوک کرنا سمجھ سے بالاتر ہے، وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی چوہدری فواد حسین اس مسئلے کے حل کے لیے اپنا کردار ادا کریں اور اس مسئلے کے حل کو یقینی بنائیں۔

ان خیالات کا اظہار سٹی صدر پاکستان تحریک انصاف کھیوڑہ مرزا دلدار نے ملک عدنان کھوکھر کو خصوصی انٹرویو دہتے ہوئے کیا۔ انہوں نے مزیدکہا کہ ٹاؤن کمیٹی کھیوڑہ کے یونین کونسل میں تبدیل ہونے کا سارا ذمہ مسلم لیگ ن کا ہے کیونکہ جب مردم شماری کی گئی تو مردم شماری میں کھیوڑہ شہر کی پوری آبادی کا ذکر نہیں کیا، اس وقت کھیوڑہ شہر کی آبادہ کم از کم 60ہزار کے قریب ہے لیکن اب کھیوڑہ کی آبادی 38ہزار بتائی جارہی ہے میں دعوی کرتاہوں کہ اگر اب بھی مردم شماری کروائی جائے تو کھیوڑہ کی آبادی 60ہزار سے کم نہیں ہو گی۔

ان کا مزیدکہنا تھا کہ میں کافی دنوں سے دیکھ رہا ہوں کہ سوشل میڈیا پر کچھ لوگ حکومت کو برا بھلا کہہ رہے ہیں کہ اس کے ذمہ دارموجوددہ حکومت والے ہیں لیکن ان کو مین مسئلہ پتا ہی نہیں ہے حکومت کی جانب سے جتنی بھی ٹاؤن کمیٹیز 50ہزار سے کم آبادی والی ہیں ان کو یونین کونسل میں تحلیل کیا جارہا ہے جب مردم شماری میں ہی کھیوڑہ کی آبادی 38ہزار ہے تو کیسے وہ ٹاؤن کمیٹی ہی رہتی۔

مرزا دلدار نے کہا کہ ہمیں بجائے ایک دوسرے پر تنقید کرنے کے اس مسئلے کا حل سوچنا چاہیے اس کے لیے تمام پارٹیز کو ایک پلیٹ فارم پر اکھٹا ہونے چاہیے اور شہر کی فلاح و بہود کے لیے مل کر کام کرنا چاہیے جو کھیوڑہ کے سماجی حلقے ہیں وہ بھی اس مسئلے میں ہمارا ساتھ دیں کیونکہ یہ ہم سب کا مشترکہ مسئلہ ہے اگر اس مسئلے کا حل نہ کیا گیا تو ہمارے شہر کے فنڈز دوسرے علاقوں میں منتقل ہو تے رہیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ہماری مشینری کا استعمال بھی ہمارے شہر کی صفائی کے لیے نہیں کیا جائے گا اور سارا نظام تحصیل کونسل میں چلا جائے گا جوکہ کھیوڑہ شہر کا بہت بڑ ا نقصان ہے اگر ایک دفعہ کھیوڑہ کو دوبارہ یونین کونسل بنا دیا گیا تو دوبارہ ٹاؤن کمیٹی یا میونسپل کمیٹی بننے میں بہت وقت لگ جائے گا اور ہمارے شہر کا کام بھی سست روی کا شکار ہو جائے گا۔

مرزا دلدار نے کہا کہ اب اس مسئلہ کا ایک ہی حل ہے کہ وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی چوہدری فواد حسین اس معاملہ میں سنجیدگی کا مظاہرہ کریں اور میں امید کرتا ہوں کہ وہ اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے سنجیدہ بھی ہوں گے کیونکہ ان کے حلقہ انتخاب اور ایسے شہر کا مسئلہ ہے جس کو وہ آبائی شہر بھی کہتے ہیں میں مطالبہ کرتا ہوں تمام شہریوں اور سیاسی پارٹیز کے سرکردہ لوگوں سے کہ وہ اس معاملہ میں ہمارا ساتھ دیں ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button