کھیوڑہ

کھیوڑہ شہر میں حکومتی رٹ ختم، شہر بھر کے قصاب عوام کو مضر صحت مہنگا گوشت فروخت کرنے لگے

کھیوڑہ: انتظامیہ کی ملی بھگت سے قصابوں نے عوام کے چھکے چھڑا رکھے ہیں ،نام نہاد ریٹ لسٹیں نمائشی پروگرام اور دوکان داروں سے دس پورے یومیہ وصولی سے زیادہ کچھ نہیں ہے ،سلاٹر ہاوس اور ویٹری نظام کی عدم موجودگی میں قصاب مادہ،لاغر ،بیمار جانور گھروں میں بنائے مذبح خانوں میں تیار کر کے عوام کو مہنگے داموں کھلا رہے ہیں ۔

چکن 300 کی بجائے350،گائے کا گوشت 300کی بجائے400،اور بکرا گوشت 600کی بجائے800 روپے کلو تک فروخت ہو رہا ہے۔ ڈپٹی کمشنر جہلم اور اسسٹنٹ کمشنر پنڈدادن خان سے عوامی مطالبہ ہے کہ بھاری تنخواوں پر موجود اہلکاروں کو عوام کی داد رسی کے لئے مستقل بنیادوں پر چیکنگ کے نظام کو زندہ کرنے کے احکامات دئیے جائیں۔

تفصیلات کے مطابق کھیوڑہ شہر میں حکومتی رٹ غائب ہو چکی ہے شہر بھر کے قصاب عوام کو ناقص مضر صحت غیر تصدیق شدہ اور مہنگا گوشت فروخت کر رہے ہیں پورے شہر میں کوئی ایک سلاٹر ہاؤس نہیں ہے اس کے باجود میونسل کمیٹی کی انتظامیہ نے لاکھوں روپے کا ٹھیکہ اس مد میں کر رکھا ہے برائیلر چکن ،گائے سمیت بکرے کا گوشت حفظان صحت کے اصولوں سے میلوں دور انتہائی ناقص حالت میں فروخت کیا جاتا ہے کسی بھی قسم کا گوشت زندہ جانور کے زبح ہو کر دوکان تک پہنچے تک ویٹرنری ڈاکٹر کی چیکنگ سے پاس نہیں کیا جاتا۔

انتظامیہ کی ملی بھگت سے قصاب مادہ،لاغر ،بیمار جانور گھروں میں بنائے مذبح خانوں میں تیار کر کے عوام کو مہنگے داموں کھلا رہے ہیں جبکہ بھاری تنخواوں پر موجود انتظامی عملہ اپنے دفتروں تک محدود ہے جبکہ نام نہاد ریٹ لسٹیں نمائشی پروگرام اور دوکان داروں سے دس پورے یومیہ وصولی سے زیادہ کچھ نہیں ہیں ،یاد رہے یہ ریٹ لسٹیں دوکان داروں تک دوپہر بارہ بجے کے بعد پہنچتی ہیں جب تک دوکانداری ختم ہو رہی ہوتی ہے۔

عوامی سماجی حلقوں نے ڈپٹی کمشنر جہلم سمیت اسسٹنٹ کمشنر پنڈدادن خان سے مطالبہ کیا ہے کہ سرکاری خزانے سے بھاری تنخواہیں لینے والے اہلکاروں کو عوام کی داد رسی کے لئے مستقل بنیادوں پر چیکنگ کے نظام کو زندہ کرنے کے احکامات جاری کئے جائیں۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button