کالا گجراں جنگل کے قانون میں تبدیل، شادی بیاہ کی تقریبات پر ہوائی فائرنگ رواج بن گیا

0

جہلم: تھانہ صدر چوکی کالا گجراں کا علاقہ جنگل کے قانون میں تبدیل، شادی بیاہ کی تقریبات پر ہوائی فائرنگ رواج بن گیا ، بااثر افراد اور بگڑے گھرانوں کے رئیس زادوں نے شادی بیاہ ، تیل مہندی و دیگر رسومات کے موقع پر میرج ہالز و میرج گارڈنز میں آتش بازی سمیت ہوائی فائرنگ کرنا معمول بنا لیا ، پولیس چوکی کالا گجراں کا انچارج آتش بازی آرڈیننس پر عملدرآمد کروانے میں بری طرح ناکام ، شہریوں کا ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر جہلم سے نوٹس لینے کا مطالبہ۔

تفصیلات کیمطابق تھانہ صدر پولیس چوکی کالا گجراں کے علاقہ میں واقع میرج ہالز و میرج گارڈنز شادی بیاہ کے موقع پر آتش بازی ہوائی فائرنگ کرنے والوں کو روکنے میں ناکام جبکہ انچارج پولیس چوکی کالا گجراں نے قانون کی دھجیاں اڑانے والوں کے ساتھ ہاتھ ملا لیا۔

گزشتہ روز مقامی میرج ہال میں شادی کی تقریب کے دوران باراتیوں نے آتش بازی اور اندھا دھند ہوائی فائرنگ کرکے علاقے کو خوف و حراس میں مبتلا کر دیا علاقہ مکینوں کی شکایت پر انچارج پولیس چوکی کالا گجراں نے ہوائی فائرنگ اور آتش بازی کرنے والوں کو گرفتار کرنے کی بجائے میرج ہال کے منیجر کو اٹھا لیا اور معاملات طے ہونے پر مینجر کو بھی بغیر کسی کارروائی کے بھیج دیا۔

شہریوں کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ پولیس چوکی کالاگجراں میں مک مکا کی پالیسی کیوجہ سے جرائم میں تیزی سے اضافہ ہو رہاہے ۔شہریوں کاکہنا تھا کہ پنجاب اسمبلی نے آتش بازی، اور ہوائی فائرنگ پر پابندی عائد کر رکھی ہے ، مگر انتظامیہ آتش بازی ، ہوائی فائرنگ پر پابندی کے بل کی منظوری کے باوجود قانون پر عملدرآمد کرانے میں ناکام نظر آ رہی ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ سکولوں ، کالجوں کے طلباء وطالبات سمیت گھروں میں موجود معمر بزرگ شہری آتش بازی و ہوائی فائرنگ سے گونجنے والی آواز سے پریشانی اور زہنی کوفت میں مبتلا ہوجاتے ہیں۔ جس کے خاتمے کے لئے متعلقہ پولیس چوکی کے انچارج سمیت ذمہ داران کو عملدرآمد کرنے کا پابند بنایا جائے تاکہ چوکی کالا گجراں میں نافذ جنگل کے قانون کا خاتمہ ہو سکے ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.