جہلماہم خبریں

ایک کلو چینی کے حصول کیلئے صارفین کی لمبی لمبی قطاریں، ازیت زدہ رمضان بازار شہریوں نے مسترد کر دیا

جہلم: 1 کلو چینی کے حصول کیلئے صارفین کی لمبی لمبی قطاریں، گھنٹوں انتظار کے بعد انگوٹھے کا نشان اور شناختی کارڈ کی کاپی اتنا ازیت زدہ رمضان بازار شہریوں نے مسترد کردیا، یوٹیلٹی سٹورز اور رمضان بازاروں میں اشیاء خوردونوش کی قلت، آٹا، چینی گھی ،غائب شہریوں نے رمضان بازاروں اور یوٹیلیٹی سٹورز پر عدم اطمینان کا اظہار کر دیا جبکہ یوٹیلٹی سٹورز پر 2 کلو چینی کے حصول کے لیے 2 ہزار روپے کی خریداری کو یقینی بنانے کی پابندی عائدہے۔

تفصیلات کے مطابق حکومت کی طرف سے قائم کئے گئے رمضان بازاروں میں سفید پوش طبقے کی عزت نفس مجروح کرنے کے لئے انتظامیہ نے سستی چینی دینے کے نام پر ایک کارندے کی ڈیوٹی لگا رکھی ہے جو بڑی مشکل سے 10 منٹ کے بعد 1 صارف کو 1کلو چینی سے نوازتا ہے ، جبکہ اسٹال پر تعینات کارندہ دن کے وقت ایک سے ڈیڑھ گھنٹا آرام کرنا اپنا قانونی حق سمجھتا ہے۔

رمضان بازار میں آنے والے صارفین نے اخبار نویسوں سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ رمضان بازار میں 2 اور 3 نمبر اشیاء خوردونوش فروخت کے لئے سجائی گئی ہیں ، 1 کلو چینی حاصل کرنے کیلئے ایک صارف کو کئی گھنٹے لائن میں انتظار کرنا پڑتا ہے ، انتظامیہ نے سوچی سمجھی سازش کے تحت شہریوں کی عزت نفس مجروح کرنے کی غرض سے چینی کے اسٹال پر ایک شخص کو تعینات کر رکھا ہے ، تاکہ شہریوں کی مشکلات میں اضافہ ہو اور کم سے کم چینی کی فروخت ہو سکے۔

شہریوں کا کہناہے کہ اسٹال پر تعینات اہلکار ایک شہری پر کم از کم 10 منٹ ضائع کرتا ہے ، اس طرح ایک گھنٹے میں صرف 6 صارف چینی کی سہولت سے مستفید ہوتے ہیں جبکہ رمضان بازار میں اشیاء ضروریہ ایک نمبر کی بجائے 2 اور 3 نمبر کی اشیاء سجائی گئی ہیں جو کہ قابل استعمال نہ ہیں ، جس کی وجہ سے شہری رمضان بازار سے چینی اور گھی کی خریداری کے لئے آتے ہیں ، انتظامیہ نے مادہ جانوروں کو ذبحہ کرنے پر پابندی عائد کر رکھی ہے جبکہ رمضان بازار میں مادہ جانور ذبح کرکے فروخت کیے جا رہے ہیں جوکہ انتظامیہ کی کارکردگی پر سوالیہ نشان ہے ۔

شہریوں نے وزیراعظم پاکستان ، وزیراعلیٰ پنجاب سے مطالبہ کیاہے کہ رمضان بازاروں میں نافذ جنگل کے قانون کے خاتمے کے لئے چھاپہ مار ٹیمیں تشکیل دی جائیں تاکہ شہری حکومتی سہولیات سے مستفید ہو سکیں۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button