جہلم

جہلم میں بھیک مانگنی والی نوجوان لڑکیاں جسم فروشی کا دھندہ کرنے لگیں

جہلم: بھیک مانگنی والی نوجوان لڑکیاں جسم فروشی کا دھندہ کرنے لگیں ،قانون نافذ کرنے والے ادارے خاموش، خوبرو لڑکیاں سج سنور کر ریلوے روڈاور بس سٹینڈ میں آجاتی ہیں، شکار پھنسا کر ریلوے کوارٹروں اور ماڈل کالونی میں دعوت گناہ دی جاتی ہے ، سکولوں ، کالجوں سے بھاگے لڑکے ان کا شکار ہوتے ہیں ، نوجوان نسل تباہ ہونے لگی ، ایڈز جیسی بیماریاں پھیلنے کا خدشہ، شہر کی رفاعی ، فلاحی ، مذہبی تنظیموں کا ڈی پی او جہلم سے نوٹس لینے کا مطالبہ۔

تفصیلات کے مطابق جہلم شہر ریلوے روڈ، جنرل بس سٹینڈ سمیت گنجان آباد علاقوں میں جسم فروشی کا دھندہ عروج پکڑ رہاہے ، گدا گروں کے بھیس میں خوبرو لڑکیاں جسم فروشی جیسے بے شرم دھندے میں ملوث پائی جارہی ہیں ایسی گدا گر لڑکیاں سج سنور کر بھیک مانگنے کے بہانے نکلتی ہیں اور رنگین مزاج دکانداروں کی عیاشی کا ذریعہ بن رہی ہیں۔

ریلوے روڈ، جنرل بس سٹینڈسمیت شہر کے بازاروں اور پلازوں میں خریداری کے لئے آئے ہوئے جوانوں سمیت سکولوں کالجوں سے بھاگے ہوئے طلباء کو اپنی اداؤں سے پھنسا کر ریلوے کالونی کے کوارٹروں میں جسم فروشی کا دھندہ کیا جارہاہے ، نوجوان نسل تباہ ہورہی ہے، شہر میں قائم قبحہ خانوں میں آنے والی فحاشہ عورتوں کی وجہ سے ایڈز جیسی موذی امراض پھیلنے کا بھی خدشہ لاحق ہے۔

شہر کی عوامی ، سماجی ، رفاعی ، فلاحی تنظیموں نے ڈی پی او جہلم سے مطالبہ کیاہے کہ ریلوے کالونی اور گنجان آباد علاقوں سمیت مضافاتی علاقوں میں قائم ہونے والے جسم فروشی کے اڈوں کے خاتمے کے احکامات جاری کئے جائیں تاکہ نوجوان نسل کو بے راہ روی سے بچایا جا سکے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button