سرکاری تعلیمی اداروں کی بلدیات کو حوالگی نامنظور ہے، اساتذہ تنظیمیں

0

جہلم: اساتذہ تنظیموں کا مشترکہ اجلاس پنجاب ٹیچرز یونین کے مرکزی صدر چوہدری محمد سرفراز کی میزبانی میں منعقد ہوا۔ جس میں مرکزی چیئر مین پنجاب ٹیچرز یونین پنجاب سید سجاد اکبر کاظمی، پنجاب ٹیچرز یونین کے مرکزی صدور اللہ بخش قیصر، امتیاز احمد عباسی لطیف شہزاد، ریاض مصطفی، چوہدری محمد صفدر مرکزی صدر پنجاب ایجوکیٹرز ایسوی ایشن پنجاب، ایس ای ایس کے مرکزی صدر داودخان، اسلم ساہی، اسلم گھمن اور رانا لیاقت علی سمیت 200 سے زائد ضلعی، ڈویژنل اور مرکزی عہدیداران نے شرکت کی۔

تمام اساتذہ تنظیموں کے صدور نے متفقہ طور پر فیصلہ کیا کہ تعلیمی اداروں کو کسی صورت بلدیات کے حوالے نہیں ہونے دیں گے چاہے اس کے لئے کوئی بھی قربانی دینی پڑے تعلیمی میدان میں ناکامی کی اصل وجہ یہ بھی ہے کہ حکمران و سیاستدان تعلیمی اداروں کو سیاسی اکھاڑے بنانے پر تلے ہوئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ 70 سالوں سے شعبہ تعلیم کو بھی سکول بورڈز، بورڈ آف گورنر، بلدیاتی اداروں اور کبھی صوبائی تحویل میں دے کر تا کام تجربات کئے گئے اور اب اساتذہ کو غلام بنانے کی سازش کی جارہی ہے جو کسی صورت قبول نہیں۔ نئے بلدیاتی ایکٹ کے خلاف بھر پور احتجاج کی تحریک چلائی جائے گی اور دیگر اساتذہ تنظیموں کو احتجاجی تحریک میں شامل کرنے کے لئے 24 جولائی کو مری میں اساتذہ تنظیموں کا مشترکہ اجلاس ہوگا جس میں احتجاجی تحر یک کو حتمی شکل دی جائے گی۔

اجلاس میں موجود پنجاب ٹیچرز یونین کے تمام دھڑوں کے مرکزی صدور نے متفقہ فیصلہ کیا کہ پنجاب ٹیچرز یونین کے مشتر کہ الیکشن کا انعقادضروری ہے۔ مشتر کہ الیکشن کے لئے دیگر گروپس کو اعتماد میں لیکر دسمبر 2019 میں پنجاب ٹیچرز یونین کا مشترکہ الیکشن کروایا جائے گا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.