فوادچوہدری کا بزدار حکومت سے شکوہ سچ نکلا

0

پنڈدادنخان: فواد چوہدری کا ترقیاتی منصوبوں میں بزدار حکومت سے شکوہ سچ نکلا، پنجاب میں ترقیاتی فنڈز کی بندر بانٹ میں بزدار حکومت کی کارکردگی سا منے آگئی، پنجاب میں وزیراعظم پاکستان کا آبائی ضلع فنڈز کے اجرا اوراستعمال میں ناقص کارکردگی والا پہلاضلع نکل آیا۔

فواد چوہدری کے ضلع جہلم کیلئے ساڑھے تین ارب روپے کا پیکج پاس ہوا لیکن 50 کروڑ روپے کا اجرا اور جہلم شہر کی فنڈز کے استعمال میں کارکردگی ابتک صرف 15 فیصد ہے۔

تحریک انصاف کی حکومت کیساتھ ان کے اتحادیوں نے پنجاب حکومت سے شکوہ کیا تو حکومتی وزراء بھی اب بزدار حکومت کی گڈ گورننس کیخلاف کھل کر سامنے آچکے ہیں، وفاقی وزیر فواد چوہدری نے کہاکہ پنجاب میں ترقیاتی منصوبوں کا فنڈز ضلعی حکومتوں کو سست روی سے مل رہا ہے۔

بزدارحکومت نے تو پاکستان کے دل لاہور کی تیز رفتار ترقی کو سست بنا دیا، لاہور اب تک چار ارب روپے کے استعمال کیساتھ ناقص کارکردگی والے اضلاع میں پانچویں نمبر پر ہے جبکہ بزدار سرکار کے اپنے ضلع کیلئے ابتک 6 ارب روپے کا اجرا کیا گیا، ڈیرہ غازی خان میں فنڈز کے استعمال میں تیزی کیساتھ 41 فیصد کارکردگی رہی۔

لودھراں کیلئے 70 کروڑ روپے کا اجرا کیا گیا لیکن فنڈز کا استعمال صرف 13 فیصد ہوا۔ گجرات کیلئے 1 ارب کے فنڈز کا اجرا کیا گیا لیکن صرف 27 فیصد خرچ ہوئے، چکوال میں ابتک 15 فیصد، راولپنڈی 14 فیصداورپاکپتن میں10 فیصد فنڈز خرچ ہوسکے، پنجاب میں ترقیاتی منصوبوں کیلئے 350 ارب روپے کا ڈویلپمنٹ فنڈز رکھا گیا تھا۔

محکمہ خزانہ کے حکام کے مطابق پنجاب میں 177 ارب روپے کے فنڈزجاری کیے جاچکے ہیں، لیکن پنجاب بھر میں نصف مالی سال گزرنے کے باوجود فنڈز ابھی تک 85 ارب روپے ہی خرچ ہو سکے۔

یاد رہے کہ وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے تحریک انصاف کی کور کمیٹی کے اجلاس میں وزیراعلیٰ عثمان بزدار اور پنجاب حکومت کی کارکردگی پر کڑی تنقید کی تھی۔

پارٹی ذرائع کے مطابق فواد چوہدری نے اجلاس میں اعتراض اٹھایا کہ پنجاب ڈلیور نہیں کر پا رہا جس کے باعث تحریک انصاف کو مجموعی طور پر دباؤ کا سامنا ہے۔

فواد چوہدری نے کہا کہ پنجاب میں نہ سیاسی حصہ ڈلیور کر رہا ہے اور نہ ہی انتظامیہ توقعات پر پورا اتر رہی ہے، پنجاب کے ڈلیور نہ کرنے سے عوامی سیاسی محاذ پر پی ٹی آئی کی کارکردگی پر تنقید ہو رہی ہے اور مرکز کو بھی تنقید کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

فواد چوہدری نے کور کمیٹی اجلاس میں انکشاف کیا کہ پنجاب کا 350 ارب کا ترقیاتی بجٹ ہے جس میں سے صرف 77ارب روپے ریلیز ہوئے، وزیراعلیٰ عثمان بزدار حکومت اضلاع کو صوبائی فنانس ایوارڈ بھی نہیں دے رہی، صوبائی سطح پر کچھ ہو رہا ہے نہ اضلاع کو فنڈز منتقل ہو رہے ہیں۔

فواد چوہدری کی نشاندہی کے بعد وزیر اعظم نے پنجاب حکومت کو صوبائی فنانس کمیشن ایوارڈ کے اجرا کا حکم دیتے ہوئے کہا کہ فوری طور پر صوبائی ایوارڈ کر کے اضلاع کو فنڈز منتقل کئے۔

وزرائے اعلیٰ کا خود کو بادشاہ سمجھنا عوامی مفاد کیخلاف

فواد چوہدری نے ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا ہے کہ مسئلہ پنجاب حکومت کا نہیں وسائل کی تقسیم کا ہے، وزرائے اعلیٰ کیپاس صوابدیدی فنڈ ہونا آرٹیکل 140-A کی خلاف ورزی ہے، فارمولے کے تحت جیسے وفاق صوبوں میں فنڈز تقسیم کرتا ہے اسی طرح صوبائی سطح پر اضلاع میں فنڈز تقسیم ہونے چاہئیں، وزرائے اعلیٰ خود کو بادشاہ سمجھتے ہیں یہ عوامی مفاد کیخلاف ہے۔

فواد چوہدری کا وزیراعظم کے نام خط، نوٹس لینے کی اپیل

وزیراعظم عمران خان کے نام وفاقی وزیرسائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے خط لکھ کر اہم معاملات پر نوٹس لینے کی اپیل کردی۔

فوادچوہدری نے آئین کے آرٹیکل 140 کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ہر صوبہ آرٹیکل 140 اے کے تحت لوکل گورنمنٹ سسٹم، سیاسی،انتظامی اورمالی ذمہ داریاں مقامی حکومتوں کومنتقل کرنے کا پابند ہے، لیکن صوبے مسلسل آئین کے آرٹیکل 140 کی خلاف ورزی کررہے ہیں اور اضلاع کی سطح پر فنڈز کی منتقلی نہیں کی جارہی۔

فوادچوہدری نے کہا کہ پنجاب میں شہبازشریف نے اپنے دور حکومت میں صوبائی فنانس کمیشن ایوارڈ نہیں دیا اور آرٹیکل 140 کی بھر پور خلاف ورزی کی لیکن بدقسمتی ہے کہ تحریک انصاف کی حکومت نے بھی صوبائی فنانس کمیشن ایوارڈ کاابھی تک اعلان نہیں کیا، آرٹیکل 140 پر عملدرآمد نہ ہونے کے باعث اضلاع کو انکا صحیح حصہ نہیں مل رہا، جس سے ضلعی سطح پر مسائل بڑھ رہے ہیں۔

فوادچوہدری نے مزید کہا کہ عمران خان صاحب آپ ہمیشہ سے مضبوط لوکل گورنمنٹ سسٹم پر زور دیتے رہے ہیں مگر یہ اس وقت تک ممکن نہیں جب تک صوبائی فنانس کمیشن ایوارڈ کااجرا نہیں ہوگا، آپ سے گزارش ہے کہ آرٹیکل 140 کی خلاف ورزی کانوٹس لیں اور صوبوں بالخصوص پنجاب کو صوبائی فنانس کمیشن ایوارڈ کے اجرا کا حکم دیں۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.