پاکستان میں کورونا وائرس کی صورتحال

مصدقہ کیسز
64,028
+2,801 (24h)
اموات
1,317
+57 (24h)
صحت یاب
22,305
34.84%
زیر علاج
40,406
63.11%
دینہ

لاک ڈاؤن سے ازدواجی زندگیاں خطرے میں، پنجاب میں ہزاروں خلع کیلئے درخواستیں آ گئیں

کورونا وائرس کے باعث لاک ڈاؤن جہاں پریشانیوں کا انبار لایا وہیں ان پریشانیوں کے باعث گھریلو جھگڑے بھی بڑھ گئے، لوگ ڈپریشن کا شکار ہونے لگے۔ لاک ڈاؤن سے سب سے زیادہ دیہاڑی دار طبقہ متاثر ہوا، گھریلو ذمہ داریاں پوری نہ ہوسکیں جس کے باعث میاں بیوی کے درمیان گھریلو ناچاقی کے واقعات بھی بڑھ گئے۔

میاں بیوی کے لڑائی جھگڑوں کے باعث پنجاب میں لاک ڈاؤن کے دوران 3 ہزار 240 خواتین نے خلع کیلئے فیملی عدالتوں سے رجوع کیا۔اعدا دو شمار کے مطابق جہلم سمیت پنجاب کے 36 اضلاع کی فیملی عدالتوں میں لاک ڈاؤن کے دوران مجموعی طورپر خلع، سامان جہیز اور خرچہ نان نفقہ کے 3 ہزار دو سو چالیس دعوے دائر ہوئے جن پر فیملی عدالتوں نے نوٹسز جاری کر کے فریقین سے جواب بھی طلب کرلیا۔

فیملی ایکسپرٹ ایڈووکیٹ نورین اصغر کا کہنا تھا موجودہ حالات میں خواتین صبر و تحمل سے کام لیں اور اپنے اخراجات کو کم کریں تاکہ شوہر پر بوجھ نہ پڑے۔

قانونی ماہر بیرسٹر اسلم شیخ نے مشورہ دیا کہ میاں بیوی کو گھریلو معاملات میں در گزر سے کام لینا چاہیے، لاک ڈاؤن کے دوران سب سے زیادہ لوگوں کو مالی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا، جس کی وجہ سے بات لڑائی جھگڑوں سے ہوتی ہوئی عدالتوں تک پہنچ رہی ہے۔

وکلا کا کہنا تھا خلع کے تمام دعوؤں میں تقریباً خواتین کا موقف ایک جیسا ہی ہے کہ شوہر خرچہ نہیں دیتا، بات بات پر لڑتا ہے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close