جہلم

ضلع بھر میں گندم کی فی من قیمت 2 ہزار روپے سے بھی تجاوز کر گئی

جہلم: ضلع بھر میں گندم کی فی من قیمت 2 ہزار روپے سے بھی تجاوز کر گئی ، جس کی وجہ سے عام دکانوں پر دیسی آٹے کی فی کلو قیمت 60روپے جبکہ نایاب سفید آٹا 64روپے فی کلو فروخت ہونے لگا، جس کا فائدہ اٹھا کر نان بائیوں نے سادہ روٹی کی قیمت 10روپے ، خمیری کی قیمت 12روپے اور نان 15روپے میں فروخت کرنا شروع کر دیا۔
تفصیلات کے مطابق فلو ر ملز مالکان نے گندم ذخیرہ کر کے آٹے کی قیمتوں میں خودساختہ اضافہ کر دیا ہے جس سے دکانوں پر دیسی آٹا فی من 2400روپے اور نایاب سفید آٹا فی من2560 روپے میں فروخت کرنا شروع کر رکھا ہے ۔ جبکہ تندور مالکان نے سادہ روٹی ، خمیر روٹی اور نان کی قیمت میں بھی خود ساختہ اضافہ کرکے فروخت شروع کر دی ہے۔
دوسری جانب یوٹیلیٹی سٹورز اور حکومتی نرخوں پر تاحال سستا آٹا دستیاب نہیں ہو سکا جس کیوجہ سے آٹے کی قیمت میں مزید اضافے کا امکان ہے۔
شہریوں کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ ضلع بھر میں آٹے کا مصنوعی بحران پیدا ہو چکا ہے اور اشیا ئے خوردونوش کی قیمتوں میں مسلسل اضافے کیوجہ سے گھی2 سو10 روپے فی کلو ، دال ، چاول اور مصالحہ جات کی قیمتوں میں بھی بے پناہ اضافہ کر دیا گیا ہے ، جس سے عام آدمی کی قوت خرید کم ہونے سے سفید پوش غریب طبقہ کے افراد کا جینا محال ہو چکا ہے۔
شہریوں نے ڈپٹی کمشنر سے مطالبہ کیا ہے کہ پرائس کنٹرول کمیٹیوں اور فوڈ اتھارٹی کے ذمہ داران کو چیک اینڈ بیلنس پر خصوصی توجہ دینے کے احکامات جاری کئے جائیں تاکہ آٹے سمیت اشیاء خوردونوش کی قیمتوں میں اضافے کو روکا جا سکے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button