پنڈدادنخاناہم خبریں

ڈنڈوٹ سیمنٹ فیکٹری دو سال سے بند، سینکڑوں مزدور خاندان بدترین معاشی بحران سے دوچار

پنڈدادنخان: ڈنڈوٹ سیمنٹ فیکٹری تقریبا دو سال سے بند، 475 مزدور خاندان میں سے تقریباً 450 خاندان بدترین معاشی بحران سے دوچار ہیں، فیکٹر ی چلوانے کے لیے ضلع جہلم کی سیاسی سماجی شخصیات کی کاوشیں بھی موثر ثابت نہیں ہو سکیں، وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین امید کی واحد کرن ہیں جو مالکان اور یونین کے درمیان کسی بھی حتمی معاہدے کیلئے اپنا کردار ادا کرسکتے ہیں، حکومت فیکٹری سے وابستہ رکرورں کے لیے عید پیکج کا اعلان کرے۔ مزدور رہنما

تفصیلات کے مطابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حلقہ تحصیل پنڈدادنخان میں واقع ڈنڈوت سیمنٹ فیکٹری جوکہ بغیر کسی ٹیکنکل فالٹ کے بااثر مالکان اور یونین کے درمیان ہونے والے معاہدوں پر عملدرآمد نہ ہونے کے باعث بند پڑی ہے جس کی وجہ سے سینکڑوں مزدور نہ صرف فاقہ کشی کا شکار ہیں بلکہ آنے والا ہر دن بد سے بدتر ہوتا جا رہاجس کے باعث ڈنڈوٹ سیمنٹ فیکٹری کا مسئلہ ا نتظامی ومعاشی بحران سے نکل کر انسانی الیمہ کی شکل اختیار کرتا جارہا ہے۔

475 مزدور خاندان میں سے تقریبا 450 خاندان بدترین معاشی بحران سے دوچار ہیں، بدقسمتی سے ابھی تک کسی موثر پلیٹ فارم سے اس مسئلہ کو ایڈریس نہیں کیا جاسکا، مزدور نما ئندہ یونین اپنے طور پر مسئلہ کے حل کیلئے کوشش کر رہی ہے مگر وسائل کی عدم دستیابی سمیت دیگر مسائل کے ساتھ یونین ابھی تک کوئی کامیابی حاصل نہیں کر سکی، ضلع جہلم کی سیاسی سماجی شخصیات کی کاوشیں بھی موثر ثابت نہیں ہو سکیں۔

سارے بحران میں امید کی واحد کرن وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین ہیں جو مالکان اور یونین کے درمیان کسی بھی حتمی معاہدے کیلے اپنا کردار ادا کرسکتے ہیں۔

مزدور رہنماؤں نے وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین سے اپیل کی ہے کہ وہ اس سلسلہ میں اپنا کردار ادا کریں عوامی سماجی حلقوں نے مزدود یونین اور مالکان سے بھی اپیل کہ وہ بھی اپنی پالیسوں پر نظر ثانی کریں اور ڈنڈوت سیمنٹ فیکٹری کے مزدودوں کی اس قربانی کو مزید طول نہ دیں اور با مقصد مذاکرات کے ذریعے اس بحران کا خاتمہ یقینی بنائیں۔

انہوں نے کہا کہ ہم وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات چو ہدری فواد حسین سے بھر پور اپیل ہے کہ وہ اس مسئلہ پر فوری نوٹس لیں اور ڈنڈوٹ سیمنٹ فیکٹری کے مزدورں کے مسائل حل کرانے میں اپنا بھر پور کردار ادا کریں، حکومت فیکٹری سے وابستہ ورکروں کے لیے عید پیکج کا اعلان کرے تاکہ مزدروں کے بچے عید منا سکیں۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button