پنڈدادنخان

محرم الحرام میں تمام مسالک کے علماء اور عوام شرپسند عناصر پر کڑی نظر رکھیں۔ محمد رمضان کمبوہ

پنڈدادنخان: شہدائے کربلا کی قربانیوں نے مسلمانوں کا سر فخر سے بلند کیا امام بارگاہوں، مساجد، اور ماتمی جلوسوں میں اجنبیوں پر کڑی نظر رکھی جائے اشتعال انگیز، مذہبی منافرت پر مبنی تقاریر سے اجتناب کیا جائے تمام مسالک کے علماء اور پیروکار شرپسند عناصر پر کڑی نظر رکھیں، لاؤڈ سپیکر پر عائد پابندی پر سختی سے عمل درآمد کیا جائے۔ ڈی ایس پی پنڈ دادن خان محمد رمضان کمبوہ کا پنڈدادنخان تحصیل کی امن کمیٹی کے ممبران اور صحافیوں سے خطاب

تفصیلات کے مطابق پولیس اسٹیشن پنڈ دادن خان میں تحصیل امن کمیٹی کا اجلاس منعقد ہوا جس کی صدارت ڈی ایس پی پنڈ دادنخان محمد رمضان کمبوہ نے کی۔ اجلاس میں ایس ایچ او پنڈدادنخان رائے ریاض احمد کھرل پولیس چوکی انچارج مسعود بٹ چوکی انچارج کھیوڑہ سب انسپکٹر محمد عثمان امن کمیٹی کے ممبران ملک غلام مصطفی میٹھو ،ٹھیکیدار کوثر جعفری ملک الطاف حسین، وائس چیئرمین خواجہ سجاد حسین توکل اختر آرائیں نیر اعوان کونسلر ندیم ملک سعادت اعوان ریڈر ڈی ایس پی تصور حسین کے علاوہ تحصیل بھر سے اہل علاقہ کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔

ڈی ایس پی پنڈ دادن خان محمد رمضان کمبوہ نے کہا ہے کہ ماہ محرم میں امن و امان برقرار رکھنے میں علماء و مشائخ صحافی اور شہریوں کا کا کردار انتہائی کلیدی ہے اور تمام مسالک کے علماء اور پیروکاروں کی بنیادی ذمہ داری ہے کہ وہ شرپسند عناصر پر کڑی نظر رکھیں اور مشکوک افراد کی اطلاع فوری طور پر پولیس کو دیں ، لاؤڈ سپیکر پر عائد کی گئی پابندی پر سختی سے عمل درآمد کیا جائے ، علماء، مشائخ اور ذاکرین کیلئے وضع کئے گے ضابطہ اخلاق پر سختی سے عمل درآمد کیا جائے اوراشتعال انگیز، مذہبی منافرت پر مبنی تقاریر سے اجتناب کیا جائے اور کسی بھی خلاف ورزی کی صورت میں سخت کاروائی عمل میں لائی جائیگی۔

ڈی ایس پی پنڈ دادنخان محمد رمضان کمبوہ نے کہاکہ تھانہ کی سطح پر قائم امن کمیٹیوں کو فعال کیا جائے اور تمام مسالک کے علماء تھانہ کی سطح پر اجلاس کریں اور امن و امان برقرار رکھنے کیلئے اقدامات کا جائزہ لیں، تمام تحصیل میونسپل افسران کو ہدایات جاری کر دی گئی ہیں کہ ماتمی جلوسوں کے روٹس کی صفائی کی جائے اوراگر کہیں ملبہ موجود ہو ہے تو اسے ہٹایا جائے۔تمام ماتمی جلوسوں اور عزاداری کی مجالس کی مقامات اور اوقات کی سختی سے پابندی کی جائے اور کسی بھی نئے جلوس یا مجلس کی بالکل کوئی اجازت نہیں ہے ۔

انہوں نے کہاکہ امام بارگاہوں، مساجد، اور ماتمی جلوسوں میں اجنبیوں پر کڑی نظر رکھی جائے اور اگر کوئی بھی مشکوک فرد یا مشکوک حرکت نوٹ کریں تو فوری طور پر پولیس کو اطلاع دیں۔ اہل تشیع کی جانب سے ماتمی جلوسوں کے رضا کار سرکاری اہلکاروں کی مدد کریں۔ شہدائے کربلا کی قربانیوں نے مسلمانوں کا سر فخر سے بلند کیا ،امام حسین نے باطل قوتوںپر واضع کر دیا کہ دین کے سپاہی سر کٹا سکتے ہیں جھکا نہیں سکتے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button