محکمہ جنگلات کی عدم دلچسپی، درختوں سمیت پرندوں کی تعداد میں غیر معمولی کمی

0

سوہاوہ: محکمہ جنگلات کی عدم دلچسپی ،درختوں سمیت پرندوں کی تعداد میں غیر معمولی کمی ، ضلع جہلم کی تحصیل سوہاوہ ، دینہ، جہلم ، اور پنڈدادنخان کے علاقہ سالٹ رینج میں واقع پہاڑی علاقے جہاں ہر سال مختلف ممالک سے نایاب اور خوبصورت پرندے ضلع جہلم کی حدود میں آتے تھے جو درختوں پراپنے آشیانے بنا کر موسم سرما کاموسم یہاں گزار کر پردیسی پرندے واپس چلے جاتے۔

محکمہ جنگلات کی ملی بھگت اور لاپرواہی سے روزانہ کی بنیادر پر ہزاروں درختوں کی کٹائی کیوجہ سے نہ صرف موسمی اثرات میں تیزی سے فرق پڑا بلکہ ہزاروں کی تعداد میں خوبصورت پرندوں کا مسکن بھی ہمیشہ ہمیشہ کے لئے ختم ہوچکا ہے۔

سرما کے موسم میں ضلع جہلم میں سائبریا سے آنے والے پرندوں مگ، نایاب طوطے ، کونج، تیتر، کالا تیتر، بٹیر، مرغابی سمیت درجنوں نایاب نسل کے پرندوں کی تعداد ہزاروں کے قریب موسم سرما میں جہلم کا سفر کرتی تھی لیکن بدقسمتی سے ارباب اختیار کی چشم پوشی سے اس سال ان پرندوں کی تعداد محدود ہو کررہ گئی تھی۔

اکثر پرندے غیر قانونی طریقہ سے شکار کرنے والے شکاریوں کا لقمہ بن جاتے ہیں چونکہ درختوں کی کمی کیوجہ سے پاکستان میں مہمان پرندے کسی ایک آدھ درخت پر ہی اپنا مسکن بنا لیتے ہیں یا پھر زمین کے کسی ٹیلے پر رات گزار لیتے ہیں ان پرندوں کا ایک ہی جگہ پر ہجوم ہونے کیوجہ سے شکاری جگہ جگہ جال لگا کر ان پرندوں کا شکار کر تے دکھائی دیتے ہیں۔

ضلع جہلم میں سینکڑوں سال قبل بادشاہ سکندر اعظم کے وقت سے ہی جنگلات میں درخت اگائے گئے تھے جو وقت کے ساتھ ساتھ وسیع ہوتے گئے ان جنگلات کے تحفظ کے لئے حکومت نے محکمہ جنگلات کو تشکیل تو دے دیا تاکہ ان درختوں کی مناسب دیکھ بھال ہو سکے۔

بد قسمتی سے محکمہ جنگلات کے افسران و ملازمین نے راتوں رات کروڑ پتی بننے کی غرض سے پچھلے چند سالوں میں غفلت و لاپرواہی کی انتہا کرتے ہوئے جس طرح ضلع جہلم میں موجوددرختوں کا نام و نشان ختم کرنے میں اپنا کردار ادا کیا اس کی مثال ماضی میں نہیں ملتی بااثر افسران و ملازمین نے جنگلات کی اس طرح صفائی کروائی ہے کہ جنگلات بے رحم کٹائی کیوجہ سے میدانوں کی منظر کشی کر رہے ہیں۔ اس سے نہ صرف فضائی آلودگی میں اضافہ ہوا ہے بلکہ چرند پرند کی تعداد میں بھی بے شمار کمی واقع ہوئی ہے۔

ارباب اختیار کو اسے سنگین صورتحال پر نوٹس لیتے ہوئے ضلع جہلم کے جنگلات کو طرف دوبارہ توجہ دینی کی اشد ضرورت ہے اور محکمہ جنگلات میں لالچی اور لوٹ مار کرنے والے افسران و اہلکاروں کو محکمہ جنگلات سے فارغ کرنے کے احکامات جاری کر نا ہوں گے ، تاکہ سرسبز و شاداب جنگلات سے موسمی تبدیلیوں کو واپس لوٹایا جا سکے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.