نیشنل پروگرام برائے خاندانی منصوبہ بندی و بنیادی صحت کے ملازمین کو سیلولر کمپنیاں انوکھے طریقے سے لوٹنے لگیں

0

پڑی درویزہ : نیشنل پروگرام برائے خاندانی منصوبہ بندی و بنیادی صحت کے ملازمین کو سیلولر کمپنیاں انوکھے طریقے سے لوٹنے لگیں ۔ چیئر مین پی ٹی اے سے نوٹس لینے کا مطالبہ ۔

تفصیلات کے مطابق نیشنل پروگرام برائے خاندانی منصوبہ بندی و بنیادی صحت کے ملازمین کو محکمہ کی طرف سرکاری طور پر موبائل سمیں دی گئی ہیں ساتھ ہی ملازمین کو ہدایات دی گئی ہیں کہ ان سموں میں ہر وقت مبلغ ایک سو (100/-)روپے کا بیلنس موجود رہنا لازمی ہے ۔ اب ہر ملازم ایک سو روپے سے زائد کی رقم کا بیلنس سِم میں لوڈ کرانے پر مجبور کر دیا گیا ہے ۔

نیز یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ یہ بیلنس ایک ماہ کے بعد خود بخود اس سم سے ختم ہو جاتا ہے جو ملازمین کے کھلے مالی استحصال کے سوا کچھ نہیں ہے ۔ اس لیے ملازمین کی طرف سے چیئر مین پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی اسلام آباد اور وفاقی وزیر مواصلات سے مطالبہ کیا گیا کہ پہلے ہی ہر موبائل صارف سے ایک سو روپے میں سے 11فیصد ٹیکس ابتدا میں ہی تفریق کر لیا جاتا ہے پھر ملازمین کی ماہانہ آمدنی ملک میں مہنگائی کے سونامی کے مقابلے میں انتہائی کم ہے اس لئے تما م محکموں کو ہدایات کی جائیں کہ وہ سیلولر کمپنیوں سے ملی بھگت کرکے ملازمین کے بیان بالا استحصال سے باز رہیں ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.