جہلم

خون سفید ہو گیا، حقیقی تائے نے یتیم بھتیجوں کی جائیداد ہڑپ کرنے کی ٹھان لی

جہلم: خون سفید ہو گیا، حقیقی تائے نے یتیم بھتیجوں کی جائیداد ہڑپ کرنے کی ٹھان لی، یتیم بچے ، بچیاں حصول انصاف کے لئے دربدر ، ارباب اختیار سے نوٹس لینے کا مطالبہ۔

تفصیلات کے مطابق جہلم ٹویہ محلہ کے رہائشی زین العابدین ولد اصغر علی (مرحوم) نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے بتایا کہ مسجد گنبد والی کے نزدیک ہمارے والد کی مالکیتی دکان ہے اسی دکان کی بالائی منزل پر ہماری آبائی رہائش ہے ہمارے والد شیخ اصغر علی 2003 میں وفات پا گئے، اس عرصہ میں ہماری کفالت ہماری والدہ نے کی جبکہ رواں برس 18 فروری 2018 کو ہماری والدہ بھی اللہ کو پیاری ہو گئی۔

اس دوران ہمارے حقیقی ماموں میاں عظیم ولد میاں عبدالرؤف اور ان کے قریبی دوست حاجی محمد ارشد ولد محمد امین سکنائے لالہ موسیٰ تحصیل کھاریاں فوتگی کے اخراجات ادا کرنے کے لئے آئے اسی اثناء میں ہمارے تایا شیخ شبیر علی ولد اکبر علی ہمارے گھر داخل ہوئے مجھے اور میری بہنوں کی گندی گالیاں دینا شروع کر دیں اور دھمکی دی کہ رہائش کو فوراً خالی کر دو ورنہ اس کے سنگین نتائج برآمد ہونگے جس پر میں دریافت کیا کہ جگہ ہمارے باپ داد کی مالکتی ہے اور آپ نے ہمارے ساتھ اس طرح کا رویہ کیوں اپنا رکھا ہے۔

انہوں نے ہماری ایک نہ سنی جس پر ہمارے ماموں میاں عظیم ولد میاں عبدالرؤف اور ان کے ساتھ آئے ہوئے دوست نے مداخلت کرکے حالات کو کنٹرول کیا اس کے باوجود ہمارا تایا ہمیں جان سے مارنے کی دھکیاں دیتا ہوا چلا گیا جب رواں ماہ ہم نے مکان سے ملحقہ دکان کا کرایہ وصول کرنے کے لئے کرایہ دار سے رابطہ کیا تو انہوں نے انکشاف کیا کہ کرایہ ہر ماہ شیخ شبیر علی وصول کرتا ہے اور اس نے منع کررکھا ہے کہ کسی کو کرایہ وغیرہ ادا نہ کیا جائے۔

میں نے اور میری بہنوں نے تایا سے رابطہ کرکے دکان کے کرایہ کی بابت دریافت کیا تو انہوں نے بتایا کہ مذکورہ جگہ تمہارے والدکی وفات کے بعد میں نے اپنے نام منتقل کروالی تھی اور اب یہ جگہ میں نے اپنی بیٹی کو تحفے میں دے دی ہے آپ اپنی رہائش کا بندوبست کریں ورنہ سامان گلی میں پھینک دونگا اور تمہاری شناخت بھی کوئی نہیں کر سکے گا۔

متاثرہ نوجوان نے ڈی پی او جہلم ، ڈپٹی کمشنر جہلم سے مطالبہ کیا ہے کہ ہمارے ساتھ ہمار ا حقیقی تایا چند مرلے زمین کی خاطر سخت ناانصافی کر رہا ہے ، ہمارے ساتھ ہونے والی زیادتی کی انکوائری کروائی جائے ،اگر ہمارے تایا نے حقیقت میں ہمارے حصے کی جگہ اپنے نام منتقل کروالی ہے تو قانون کے مطابق مقدمہ درج کرکے ہمیں انصاف فراہم کیاجائے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button