جہلماہم خبریں

جہلم میں فیشن شوز کے نام پر بے حیائی اور مخلوط ڈانس کلچر کا فروغ شروع

جہلم: فیشن شوز کے نام پر بے حیائی اور مخلوط ڈانس کلچر کا فروغ شروع، اسلام آباد ، راولپنڈی اور لاہور سے فیشن ڈیزائنر شہر میں نوجوان لڑکے لڑکیوں کو ورغلانے لگے، فیشن شوز میں شریک نوجوان گھروں سے باغی ، فیشن کے نام پر منشیات کا استعمال بھی جاری ،مذہبی اور سماجی حلقوں کی خاموشی سوالیہ نشان۔

تفصیلات کے مطابق جہلم جیسے پرامن شہر میں فیشن شوز کے نام پر بے حیائی اور مخلوط ڈانس کلچر کو فروغ دینے کیلئے اسلام آباد، راولپنڈی اور لاہور سے نام نہاد فیشن ڈیزائنر متحرک ہو چکے ہیں جن کو جہلم شہر کے چند بڑے تاجروں کی بھی بھر پور سپورٹ حاصل ہے گزشتہ کچھ عرصہ سے مختلف میرج ہالز کے اندر فیشن شوز کے نام پر بے حیائی کا کلچر چلایا جا رہا ہے ان فیشن شوز میں غریب گھرانوں کے لڑکے لڑکیوں کو نئے ڈریسز اور پیسوں کا لالچ دے کر کیٹ واک کروائی جاتی ہے گھروں سے فیشن شوز کے نام پر نکلنے والے لڑکے اور لڑکیوں کیلئے یہ عیاشی پوائنٹ بن چکے ہیں ۔

اس حوالے سے جہلم اپڈیٹس تحقیقات میں انکشاف ہو ا ہے کہ بڑے شہروں سے نام نہاد فیشن ڈیزائنر مقامی تاجروں سے مل کر ہر دو تین ماہ بعد فیشن شو منعقد کرتے ہیں جہاں نوجوان لڑکیاں جن میں زیادہ ترکا تعلق دوسرے شہروں جبکہ چند ایک کا تعلق ضلع جہلم سے ہوتا ہے یہاں کے نوجوانوں کے ساتھ مل کر کیٹ واک کے نام پر بے حیائی پھیلاتے ہیں بھاری بھرکم ساؤنڈ سسٹم کے ساتھ انڈین گانوں پر رقص کے ساتھ ساتھ فیشن کے نام پر احسا س کمتری کے شکار نوجوان منشیات بھی استعمال کرتے نظرآتے ہیں ۔ اس کے باوجود جہلم میں مذہبی و سماجی حلقوں کی خاموشی سوالیہ نشان بن چکی ہے۔

شہریوں کا کہنا ہے کہ ضلعی انتظامیہ ، ڈسٹرکٹ پولیس جہلم میں فیشن شوز کے نام پر جاری بے حیائی اورفحاشی کے طوفان کو پروان چڑھانے والوں کے خلاف سخت کاروائی کی جائے اور فیشن شوز کی آڑ میں غیر قانونی کاروائیوں پر بھی نظر رکھی جائے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button