جہلماہم خبریں

ٹکٹوں کی کشمکش کا ڈرامائی اختتام، ندیم خادم این اے 66 سے ٹکٹ لے اڑے، مہر فیاض واپس صوبائی سیٹ پر

جہلم: ضلع جہلم میں ن لیگی ٹکٹوں کی کشمکش کا ڈرامائی اختتام ، ندیم خادم این اے 66سے ٹکٹ لے اڑے، مہر فیاض واپس صوبائی سیٹ پر ، کارکنوں میں خوشی کی لہر، ورکر گروپ سکتے میں آ گیا۔

تفصیلا ت کے مطابق ضلع جہلم میں مسلم لیگ ن کے ٹکٹوں کے معاملے پر سسپنس سے بھر پور فلم چلنے کے بعد بالآخر ’’جہاں تھے‘‘ پر اختتام پذیر ہو گئی جہلم کے حلقہ این اے 66سے چوہدری ندیم خادم کو قومی اسمبلی کی سیٹ پر قیادت کی جانب سے گرین سگنل دینے کے بعد چوہدری ندیم خادم نے باقاعدہ الیکشن مہم شروع کر دی لیکن پارٹی کے اندر سے ہی ورکرگروپ کے نام سے باغی گروپ نے احتجاج شروع کر دیا۔

اعلی قیادت کے ملاقات کرکے تحفظات کا اظہار کیا جس کے بعد پارٹی قیادت کی جانب سے ایم پی اے کے امیدوارمہر محمد فیاض کو قومی اسمبلی کیلئے ٹکٹ جاری کرنے کی یقین دہانی کروائی گئی جس سے ایک طرف ورکر گروپ میں خوشی کی لہر دوڑ گئی تو دوسری طرف ضلع جہلم کے کارکنوں ، یوسی چیئرمینوں ، کونسلرز کو سخت مایوسی کا سامنا ہوا اور گجر ہاوس میں سابق ایم پی اے لال حسین نے احتجاجی پریس کانفرنس بھی کر ڈالی۔

گزشتہ دو روز کے دوران گجر گروپ کی جانب سے اعلی قیادت سے مسلسل رابطے اور مہر فیاض کو ٹکٹ دینے پر پارٹی میں پائے جانے والے انتشار اور مایوسی بارے آگاہ کرنے کے بعد بالآخر پارٹی قیادت نے پرانا فیصلہ بحال کرتے ہوئے این اے 66کیلئے ندیم خادم کو ٹکٹ جاری کر دیا ہے، جبکہ حلقہ پی پی 26 سے چوہدری لال حسین کو ٹک جاری کر دیا گیا۔

ایم این اے کے خواب دیکھنے والے مہر فیاض کو پرانی تنخواہ پر کام جاری رکھنے کا مژدہ سنا کر صوبائی اسمبلی کا ٹکٹ جاری کر دیا گیا ہے اعلی قیادت کے فیصلے کے بعد ضلع میں کارکنوں میں بھر پور جوش وخروش پایا جاتا ہے اور چوہدری ندیم خادم کی صورت میں ایک مضبوط امیدوار میدان میں آگیا ہے ۔

دوسری طرف ورکر گروپ کے سرکردہ لیڈروں کی بے شمار کوششوں کے باوجود ان کی خواہش پوری نہیں ہوسکی اور ان کے پسندید ہ امیدوار کوقومی اسمبلی کا ٹکٹ نہیں مل سکا، جس کی وجہ سے ورکر گروپ سکتے کے عالم میں ہے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button