جہلماہم خبریں

دریائے جہلم کے کنارے نصب غیر قانونی کریش مشینری اور ڈمپرز مالکان کے خلاف سینکڑوں افراد کا احتجاج

جہلم: دریائے جہلم کے کنارے نصب غیر قانونی کریش مشینری اور ڈمپرز مالکان کے خلاف،شہر کے مضافاتی علاقوں کے سینکڑوں افراد کا جہلم پریس کلب کے باہر احتجاجی مظاہرہ ،مظاہرین کا ضلعی انتظامیہ محکمہ ماحولیات ،معدنیات ،واپڈا ، پولیس اور منگلا ڈیم انتظامیہ کے خلاف شدید نعرے بازی۔

تفصیلات کے مطابق منگلا ڈیم کے نیچے سے پتھر نکالنے کی وجہ سے منگلا ڈیم کے آس پاس کے علاقوں میں زلزلے کے جھٹکے محسوس ہونا روزانہ کا معمول بن چکا ہے جس پر علاقہ مکینوں کا کہنا ہے کہ اگر یہی صورت حال برقرار رہی تو خدشہ ہے کہ ڈیم کے نیچے سے پانی نکلنا نہ شروع ہو جائے گا، کریشن مشینوں سے اٹھنے والی دھول مٹی کی وجہ سے سانس لینا بھی دشوارہوچکا ہے ،ڈمپروں کی دن رات آمد رفت کی وجہ سے سڑکیں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو چکی ہیں ۔

کریش مشینیںقریبی آبادیوں میں موت بانٹ رہی ہیں ،واپڈا نے ان کریش مشینوں کو کیسے اور کس کے کہنے پر بجلی کی سپلائی فراہم کررکھی ہے ، سمجھ سے بالا تر ہے ۔ڈپٹی کمشنر کے احکامات کے مطابق ڈمپر زمافیا کوروکنے کی بجائے پولیس تھانہ منگلا ڈمپرز مالکان کی پشت پناہی میں مصروف عمل ہے۔

گزشتہ روز علاقہ مکینوں نے ڈمپرز کو روکنے کی کوشش کی تو تھانہ منگلا پولیس کے ملازمین نے علاقہ مکینوں پر تشدد شروع کر دیا، جو کہ سوالیہ نشان ہے ، علاقہ مکینوں کا کہنا ہے کہ تھانہ منگلا پولیس نے کریش مالکان اور ڈمپرز مالکان کے ساتھ ساز باز کررکھا ہے جس کیوجہ سے مقامی پولیس متاثرین کے ساتھ تعاون کرنے کی بجائے بااثر افراد کی پشت پناہی میں مصروف ہے۔

علاقہ مکینوں نے ڈی پی او جہلم شاکر حسین داوڑ، ڈپٹی کمشنر راؤ پرویز اختر سے مطالبہ کیا ہے کہ غیر قانونی کریشن مشینوں کو بند کروایا جائے اور سڑکوں کی تباہی کا باعث بننے والے ڈمپرز کے داخلے پر پابندی عائد کی جائے تاکہ علاقہ مکین سانس ، دمے جیسی مہلک امراض سے محفوظ رہ سکیں اور سڑکوں کو تباہی سے بچایا جاسکے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button