جہلم

ضلع جہلم میں پرائس کنٹرول کمیٹیاں غیرفعال ہونے کے باعث گراں فروشوں کی من مانیاں عروج پر

جہلم: ضلع بھر میں پرائس کنٹرول کمیٹیاں غیر فعال ہونے کے باعث گراں فروشوں کی من مانیاں عروج پر ،اشیائے خورد ونوش سبزیاں، پھلوں کی مہنگے داموں فروخت ، شہری مہنگائی کی چکی میں پسنے لگے اشیائے خور ونوش ،سبزیوں پھلوں ،مشروبات اجناس کی قیمتوں میں غیر معمولی اضافہ ہونے کی وجہ سے غریب عوام اور دیہاڑی دار طبقہ انتہائی پریشان ، پرائس کنٹرول مجسٹریٹس دفتروں تک محدود ، انتظامیہ سب اچھا ہے کی رپورٹس بھجوانے میں مگن ، صارفین سراپا احتجاج ہیں۔

تفصیلات کے مطابق شہر سمیت ضلع بھر میں گراں فروشوں نے الگ بادشاہت قائم کر لی ، پرائس کنٹرول مجسٹریٹس ٹھنڈے کمروں تک محدود ہو کر رہ گئے ، جس کے با عث گراں فروشوں نے من مرضی کے نرخ مقرر کرکے لوٹ مار کا بازار گرم کررکھا ہے ، انتظامیہ ہر ماہ پرائس کنٹرول کمیٹیوں کے اجلاس منعقد کرکے فوٹو سیشن کروا کر سب اچھا ہے کی رپورٹس بھجوارہی ہے جبکہ دکانداروں نے اشیاء خوردونوش کے من مرضی کے نرخ مقرر کرکے لوٹ مار کا بازار گرم کررکھا ہے۔

انتظامیہ ماہ رمضان میں گراں فروشوں کے خلاف کارروائیاں کر کے 11 مہینے دکانداروں کو لوٹ مار کرنے کے لئے دے دیتے ہیں۔ پرائس کنٹرول مجسٹریٹس شہر سمیت ضلع بھر میں کہیں کارروائی کرتے نظر نہیں آتے جس کیوجہ سے دکانداروں نے من مرضی کے نرخ مقرر کرکے اشیاء خوردونوش فروخت کرنی شروع کررکھی ہیں۔

قابل ذکر بات یہ ہے کہ شہر کے اندر ایسی دکانیں بھی موجود ہیں جہاں بکرے کا گوشت 1600 روپے کلو اور مرغی کا گوشت 800 روپے کلو، ٹماٹر 200 روپے کلو میں فروخت کئے جا رہے ہیں جبکہ انتظامیہ سب اچھا ہے کا راگ آلاپ رہی ہے ، دکانداروں نے 1,2 اور 3 نمبر کی اشیاء کے الگ الگ نرخ مقرر کرکے انتظامیہ کی سرپرستی میں شہریوں کو ناقص وغیر معیاری اشیاء خوردونوش مہنگے داموں فروخت کرنے میں مصروف ہیں۔

شہریوں کا کہنا ہے کہ پرائس کنٹرول کمیٹیاں ماہ رمضان کے بعددوبارہ فعال نہیں ہوسکیں اور تاجر وں نے من مانے نرخ مقرر کرلیے ہیں جس کی وجہ سے گراں فروشوں نے من مانے نرخوں پر اشیاء خورد ونوش کی فروخت کو معمول بنا رکھا ہے سبزی وفروٹ منڈیوں میں ڈبل کمیشن وصولی کے خلاف مارکیٹ کمیٹی کا عملہ بھی غیر فعال دکھائی دیتا ہے۔

ڈپٹی کمشنر قیمتوں پرچیک اینڈ بیلنس رکھنے کیلئے ضلع بھر میں پرائس کنٹرول مجسٹریٹس کی ذمہ داریاں ادا کرنے والے افسران کو پابندکریں کہ وہ گراں فروشوں کیخلاف روزانہ کی بنیاد پر کارروائیاں کریں اور گراں فروشی کے مرتکب دکانداروں کے خلاف فوجداری مقدمات کا اندراج کروائیں تاکہ عوام کو ریلیف مل سکے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button