بس کنڈیکٹر نے ایمانداری کی مثال قائم کردی، بس سے ملنے والا زیور اصلی مالک تک پہنچادیا

0

ڈومیلی: تتروٹ سے دینہ جانیوالی بس جس کانمبر 9327 ہے جس میں پنڈگل اندازاں کے رہائشی کا تقریبا 2تولے سونا بس میں گرگیا اور اسکو معلوم نہیں تھا کہاں گرا لیکن بس کے کنڈیکٹر عبدالخالق نے صفائی بس کی صفائی کی تو ایک پرس ملا جس میں طلائی زیورات اور پانچ سوروپے نکلے۔

کنڈیکٹر نے اصلی مالک کو تلاش کرکے انکے حوالے کرکے بتادیا ہے کہ اس دنیا میں ایماندار بھی لوگ موجود ہیں جس پر سونے کی مالک نے خوش سے کنڈیکٹر کو انعام بھی دیا۔یہی کنڈیکٹر اس سے پہلے بھی کئی بار کئی لوگوں کے نقدی، زیورات اور دیگر قیمتی چیزیں متعلقہ مالک تک پہنچاتارہاہے۔

بس کے مالک عدیل زاہد اور کنڈیکٹر عبدالخالق جیسے ڈرائیور کنڈیکٹر جہلم میں نہیں ملیں گے۔بس کے مالک راجہ زاہد اور اسکے بیٹے عدیل زاہد نے بھی کنڈیکٹر کو شاباش دی۔

بس کے مالک کاکہنا تھا کہ باقی بسوں سے ہم کرایہ بھی کم وصول کرتے ہیں، کسی کے پاس کرایہ نہ ہو تنگ نہیں کرتے۔راستہ میں کوئی پیدل چلتادیکھتے تو فری میں اسکو بیٹھا لیتے ہیں۔سکول کے بچوں کو بھی سردی میں بس کے اندر بیٹھا کرلاتے جاتے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ سواریوں سے بھی خوش اخلاق سے پیش آتے ہیں۔ہمارے اس کنڈیکٹر کو ہمارے ساتھ بس میں کنڈیکٹری کرتے تقریبا 15سال سے زائد کاعرصہ ہوگیاہے ایک بس پر ہی کام کررہاہے اگر کنڈیکٹر چھٹی پر ہو توہم بس ٹائم پر نہیں لے کرجاتے۔

انہوں نے بتایا کہ کنڈیکٹر اور بھی بہت ہیں جو ایک دن کیلئے آبھی جاتے ہیں لیکن نہیں چلاتے گھر کھڑی کردیتے ہیں کیوں کی جس نے ہمارے ساتھ پندرہ سال سے زاہد گزارے اور پیسوں کے معاملات میں کبھی ہیراپھیری نہیں اور اس پر اعتماد ہے۔اکثر دوسرے کنڈیکٹر کھاپی جاتے ہیں۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.