جہلم

پنجاب فوڈ اتھارٹی نے آئس فیکٹریز کے خلاف گھیرہ تنگ کر دیا، متعدد دوکانداروں کو جرمانے اور وارننگ

جہلم: آئس فیکٹریز کو دی گئی مہلت ختم پنجاب فوڈ اتھارٹی نے آئس فیکٹریز کے خلاف گھیرہ تنگ کر دیا، صوبہ بھر میں آئس فیکٹریز کی چیکنگ، جہلم میں موجود9 آئس فیکٹریز کا معائنہ کیا گیا، ان کے آرو پلانٹس اور آئس بلاکس کو چیک کیا گیا۔آئس فیکٹری میں آرو پلانٹ کا ہونا لازم،برتنوں کا حفظان صحت کے عین مطابق ہو نا ضروری۔برف کا گھریلوں استعمال کے علاوہ بڑے پیمانے پر سارا سال مشروبات کی دوکانوں پر بھی ہوتا ہے۔ آئس فیکٹریز کے مالکان کوسخت ہدایت جاری کی گئی۔

پنجا ب فوڈ اتھارٹی نے اپنا مشن صحت مند پنجاب کو جاری رکھتے ہوئے جہلم اور اس کے گردونواح کا معائنہ کیا اور معائنے کے دواران ریلوے روڈ دینہ میں موجود لاہوری مرغ شاپ کو ذبح کی ہوئی مرغی کوبغیر ڈھکے ڈسپلے میں لٹکانے،حشرات کی روک تھام کا کوئی انتظام نہ ہونے اور احاطے میں بڑی تعداد میں مکھیوں کی موجودگی ہونے کی بنا پر 2500روپے کا جرمانہ عائد کیا گیا۔

مزید کاروائیوں میں جلال پور شریف پنڈ دادنخان جہلم میں موجودشاکر چکن شاپ کو احاطے میں صفائی کے ناقص انتظامات،کوڑہ دان کو ڈھانپ کے نہ رکھنے، مرغی ذبح کرنے کے لیے سٹیل ڈرم کو استعمال نہ کرنے اور ذبح کرنے والی کونز کہ نہ ہونے کی بنا پر4500روپے کا جرمانہ عائد کیا گیا۔پنجاب فوڈ اتھارٹی نے اتور بازار کا رخ کرتے ہوئے مختلف سٹالز کی چیکنگ کی اور ناقص فروٹ اور سبزیاں موقع پر تلف کر دی اور ہدایات جاری کی۔

اس کے علاوہ چوپہ چوپس نامی جیلی میں مضر صحت فوڈ کلر کی تشخیص کے بعداس کی فروخت کو فوری طور پر روک دیا گیا ۔ شربت بذوری اور شربت سندل کو فوری طور کریانہ سٹورز سے ہٹانے کا حکم جاری کر دیا، شربت بذوری اور شربت سندل صرف میڈیکل سٹورز پر ہی فرخت ہو سکتا ہے۔ 2فوڈ یونٹس کو 7000روپے کے جرمانے، 21فوڈیونٹس کو اصلاحی نوٹس، 7فوڈ یونٹ کا لائسنس اپلائی ،27فوڈ یونٹ کے لائسنس کی تصدیق اور25فوڈ یونٹس کو زبانی ہدایات جاری کی گئیں کی مضر صحت اشیاء جن پرپنجاب فوڈ اتھارٹی کی طرف سے پابندی عائد ہے اسے رکھنا اور بیچنا قانوناً جرم ہے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button