سوہاوہ میں آوارہ کتوں کی بھرمار، باولے کتے نے خطیب جامع مسجد اور 12 سالہ بچے کو کاٹ لیا

0

پڑی درویزہ: باولے کتے نے خطیب جامع مسجد اور 12سالہ بچے کو کاٹ لیا ۔ کرکٹ کے بلے کے وار کر کے کتے کو ہلاک کر دیا گیا۔ آوارہ اور خطر ناک گھریلو کتوں کو تلف کرنے کے ساتھ ساتھ شکاری حضرات کی اخلاقی تربیت کا عوامی مطالبہ ۔

تفصیلات کے مطابق نواحی علاقہ سوگیال کی جامع مسجد کے خطیب محمد سخاوت میروی کو گاؤں کے ایک گھریلو کتے نے کاٹ لیا ساتھ ہی گلی میں موجود ایک 12سالہ لڑکے کو بھی کاٹ لیا لیکن خطیب جامع مسجد نے کتے کو قابو کر لیا اتنے میں کرکٹ کے شائقین نوجوانوں کا ایک غول آپہنچا اور کرکٹ کے بلے کے وار کر کتے کو موقع پر ہلاک کر دیا ۔ ایسی صورت حال کے متعلق اہل علاقہ نے محکمہ صحت تحصیل سوہاوہ کی انتظامیہ سے مطالبہ کیا ہے کہ شہری اور دیہاتی علاقوں میں آوارہ کتوں کی بھر مار دکھائی دیتی ہے ۔

اطلاعات کے مطابق وٹرنری ڈیپارٹمنٹ آوارہ کتوں کو تلف کر رہا ہے جس کی کوئی خاص پیش رفت منظر عام پر دکھائی نہیں دیتی اس لیے انتطامیہ کو چاہیے کہ شہر و دیہات میں آوارہ، خطرناک اور باولے کتوں کے خلاف برابر آپریشن کیا جائے تا کہ انسانی آبادی ان کتوں سے محفوظ ہو سکے ۔

عوامی سماجی حلقوں نے اسسٹنٹ کمشنر تحصیل سوہاوہ سے یہ مطالبہ بھی کیا ہے کہ علاقہ کے شکاری شائقین کو بھی پابند کیا جائے کہ وہ زیر تعلیم نوجوان نسل کو شکاری کتوں میںدلچسپی لینے سے باز رکھیں کیوں کہ اس شکاری یوں کی وجہ سے پہاڑی جنگلی علاقوں میں آبادیوں کے طلباء میں تعلیم سے دلچسپی کم اور کتوں اور شکاریات میں دلچسپی زیادہ دکھائی دے رہی ہے جو ان نوجوانوں کے مستقبل کے لیے انتہائی خطرناک ثابت ہو سکتی ہے ۔

علاوہ ازیں یہ بات بھی مشاہدے میں آئی ہے خطرناک شکاری کتوں کی مدد سے جو خطرناک جانور شکار کیے جاتے ہیں بلاوجہ ان جانوروں کو بڑی آبادیوں کے قریب لا کر نمائش کی جاتی ہے طلباء اور دیگر نوجوانوں کا قیمتی وقت بلا وجہ ضائع کیا جاتا ہے ۔ عوامی سماجی حلقوں نے اے سی تحصیل سوہاوہ سے صورت حال کا نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.