کھیوڑہپنڈدادنخاناہم خبریں

کھیوڑہ میں انسانیت کا قتل، جوان بیٹے کا سگی ماں پر تشدد، بازو توڑ کر گھر سے نکال دیا

پنڈدادنخان: خون سفید ہو گیا، کھیوڑہ شہر میں انسانیت کا قتل، جوان بیٹے کا بوڑھی والدہ پر تشدد، کامران نامی نوجوان نے والدہ کو مار پیٹ کر کے بازو توڑ دیا، 65 سالہ متاثرہ والدہ کی تھانہ پنڈدادنخان میں درخواست۔ تحفظ والدین آرڈیننس کے تحت فوری کارروائی کی جائے۔ سماجی حلقوں کا مطالبہ

تفصیلات کے مطابق کھیوڑہ میں انسانیت سوز واقعہ پیش آیا جہاں نوجوان بیٹے نے اپنی 65 سالہ بوڑھی والدہ پر مبینہ تشدد کیا، کامران نامی نوجوان نے تشدد کر کے والدہ کا بازو توڑ دیا۔

اسلام گنج کی زرینہ بیگم نامی متاثرہ خاتون نے اپنے ویڈیو بیان میں ڈی پی او جہلم شاکر حسین داوڈ سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ کامران نامی میرے حقیقی بیٹے نے مجھے مار پیٹ کر گھر سے نکال دیا ہے اور میں اپنے چھوٹے بیٹے کے ساتھ دربدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہوں۔

متاثرہ خاتون نے بتایا کہ گزشتہ روز بھی کامران نے مجھے تشدد کا نشانہ بنایا جس کے خلاف تھانہ پنڈدادنخان میں درخواست دی مگر آج تک کوئی کارروائی نہیں ہو سکی، کامران کو بااثر افراد کی پشت پناہی حاصل ہے اور میں بیوہ اور لاچار ہوں میری دادرسی کی جائے اور میری درخواست پر قانونی کارروائی کر کے مجھے تحفظ فراہم کیا جائے اور میرا گھر واپس کرایا جائے۔

سماجی حلقوں نے ڈی پی او جہلم سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ تحفظ والدین بل جو کہ نافذالعمل ہو چکا ہے کے تحت فوری کارروائی کی جائے، افسوس ناک بات یہ ہے کہ ماں جیسے ہستی کے ساتھ بیٹے کے تشدد کے واقعہ پر بھی ٹاؤٹ اپنا کردار ادا کرنے سے باز نہ آئے جبکہ ہر شخص کی ماں ہوتی ہے وہ اس کا احساس کر سکتا ہے لیکن ماں کی بجائے بیٹے کی مدد کرنے والوں کو شاہد ماں جیسا مقدس رشتہ یاد نہیں رہا۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button