دینہ

خود سے کسی چیز کو حلال یا حرام قرار دے دینا بہت بڑا ظلم ہے۔ امیر عبدالقدیر اعوان

دینہ: خود سے کسی چیز کو حلال یا حرام قرار دے دینا بہت بڑا ظلم ہے، اللہ کریم جو ساری کائنات کے خالق ہیں جو اصول انہوں نے عطا فرمائے ہیں کیسے ممکن ہے کہ کوئی ان سے تجاوز کر ے اور پھر بہتری کی اُمید بھی رکھے۔

ان خیالات کا اظہار شیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ و سربراہ تنظیم الاخوان پاکستان امیر عبدالقدیر اعوان نے ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ تمام طرح کے اختیارات اللہ کریم کے پاس ہیں اسباب میں نتائج بھی وہی پیدا کرتے ہیں ہم صرف ایماندار ہیں ،امین ہیں ہمیں اپنا ہر کام اُسی کے حکم کے مطابق کرنا ہے ،قیامت تک کے لیے اُس کے احکامات قابل عمل ہیں وہ اصول اختیار کیے جائیں جو اللہ اور اللہ کے رسول ﷺ نے ارشاد فرمائے ہیں، ذاتی پسند و ناپسند اختیار کرنے سے انسانی حیات میں شدت آتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اللہ کی یاد اور عبادات بندہ مومن کے لیے تحفظ کا باعث ہوتی ہیں اور اُس کی زندگی میں ٹھہراؤ آتا ہے، سکھ اور سکون نصیب ہوتا ہے، تکالیف میں بھی اُس کا دل مطمئن رہتا ہے اور اللہ کی رضا پر راضی رہتا ہے ،یہ ضروری ہے پسند ذاتی کو اللہ کریم کی پسند کے تحت لے آئیں،کیفیات محمد الرسول اللہ ﷺ سے زندگی آسان ہو جاتی ہے، بنیادی بات یہ ہے کہ اگر کوئی شئے دین ہے تو چھوڑی نہیں جائے گی اگر بے دینی ہے تو اپنائی نہیں جائے گی۔

امیر عبدالقدیر اعوان نے کہا کہ نیکی دنیا کی زندگی میں بھی ٹھہراؤ لاتی ہے اور برائی خود بھی گناہ ہے اور معاشرے میں فساد کا سبب بنتی ہے ،یعنی برائی دنیا و آخرت کے لیے نقصان دہ ہے ،ہر وقت اپنا محاسبہ کرتے رہنا چاہیے، اس عملی زندگی میں جو اللہ کریم نے ارشاد فرمایا ہم کتنا اختیار کیے ہوئے ہیں، اس کے لیے ضروریات دین کا جاننا ہر ایک کی بنیادی ذمہ داری ہے، اللہ کریم صحیح شعور عطا فرمائیں ،آمین۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button