جہلم

شہری استعمال شدہ ماسک کو سڑکوں سمیت ادھر اُدھر کہیں بھی پھینکنے سے اجتناب کریں۔ ڈاکٹر حفیظ الرحمٰن

جہلم: محکمہ صحت کے ذمہ داران نے ماسک کو روزہ مرہ کی زندگی میں ضروری قرار دے رکھا ہے ، استعمال شدہ ماسک کو سڑکوں سمیت ادھر اُدھر کہیں بھی پھینکنے سے شہری اجتناب کریں۔

اس حوالے سے ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال کے شعبہ ٹی بی و تپ دق ڈاکٹر ملک حفیظ الرحمٰن کا کہنا ہے کہ ماسک چاہے غیر معیاری یا کپڑے کے ہوں ماسک استعمال کرنے بہت ضروری ہیں، اس صورتحال میں ٹیشو پیپر سے بنا ماسک بھی استعمال میں لانے سے جراثیم کی منتقلی سے بچا جا سکتا ہے۔

انہوںنے کہا کہ آج کل کورونا سے احتیاط برتنے کی خاطر لوگوں میں ماسک کے استعمال کا رجحان بڑھتا جارہا ہے ، حکومتی احکامات کے مطابق ہر شہری کو ماسک کا استعمال معمول بنانا ہوگا، شہریوں میں ماسک کے پہننے اتارنے اور تلف کرنے بارے آگاہی کی اشد ضرورت ہے، اول تو کچھ لوگ ابھی تک ماسک کے استعمال کو لازمی نہیں سمجھتے جو بذات خود ان کے لئے نقصان دہ ہونے کے ساتھ ساتھ ان کے اردگرد کے لوگوں کے لئے بھی خطرناک ثابت ہو سکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ جو لوگ ماسک استعمال کر رہے ہیں وہ بھی اس کے نقصانات سے ناواقف ہوتے ہوئے ٹشو پیپر کی طرح ماسک کو استعمال کرکے سڑکوں پر اور پبلک مقامات پر پھینک دیتے ہیں، جس سے ان میں موجود جراثیم دیگر لوگوں کے لئے انتہائی خطرناک ثابت ہو سکتے ہیں، پلاسٹک بیگ کی طرح یہ ماسک بھی ماحولیاتی آلودگی کا سبب بن سکتے ہیں مگر ان میں ایک بات کا زیادہ خدشہ پایا جاتا ہے کہ اگر انہیں صیح طریقے سے ضائع یا ٹھکانے نہ لگایا جائے تو ان استعمال شدہ ماسک کے ذریعے کورونا کے پھیلنے کے خدشات بھی بڑھ سکتے ہیں۔

ڈاکٹرملک حفیظ الرحمٰن کا مزید کہنا ہے کہ استعمال شدہ ماسک کا غلط استعمال اور سرعام پھینکنا نہایت ہی غیر ذمے دارانہ رویہ اور صحت عامہ کے لئے خطرناک ثابت ہوسکتا ہے، ماسک کو تلف کرنے کا صیح طریقہ یہ ہے کہ اسے پلاسٹک کی تھیلی میں ڈال کر ڈسٹ بن میں پھینکا جائے اور گہرا گڑھا کھود کر دفن کر دیا جائے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button