دینہ

روز مرہ معاملات میں شکوہ شکایت کی بجائے بہترین اسباب اختیار کیئے جائیں۔ امیر عبدالقدیر اعوان

دینہ: زندگی کے روز مرہ کے معاملات میں شکوہ شکایت کی بجائے بہترین اسباب اختیار کیئے جائیں کیونکہ اللہ کریم جو عطا کر رہے ہیں وہ ان مشکلات کے مقابلے میں کچھ بھی نہیں ،ہر حال میں کلمہ شکر ادا کرنا چاہیے ۔

ان خیالات کا اظہار شیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسی امیر عبدالقدیر اعوان نے ایک اجتماع کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہاکہ اللہ کی نا فرمانی سے خود کو روکے رکھنا اس کا نام صبر ہے ۔ دنیاوی اسباب سب سے بہتر اختیار کیے جائیں اور پھر توکل الی اللہ کیا جائے ۔انسانی سوچ محدود ہے اوررب کائنات لامحدودہیں۔تو لا محدود ،محدود کیسے سما سکتا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ اپنی ذات کو ختم کرنا ہی بندگی ہے ۔بندگی کی تعمیر شروع ہو جائے تو پھر ہر عمل پر بندہ لرزاں و ترساں رہتا ہے کہ اپنی حدود و قیود سے باہر نہ آجاؤں۔اور اپنی خواہشات ذاتی کو قربان کرنا آسان ہو جاتا ہے ۔ہر عمل میں احکام الٰہی کو اولیت دی جاتی ہے ۔اس عمل سے اللہ کریم یہ توفیق عطا فرماتے ہیں کہ بندہ کو سجدہ شکر کی توفیق نصیب ہوتی ہے ۔

یاد رہے مورخہ 4 مارچ 2018 بروز اتوار صبح 10:00 بجے دارالعرفان منارہ ،چکوال میں الشیخ حضرت مولانا امیر محمد اکرم اعوان رحمۃ اللہ علیہ کی تیسری تفسیر جس کی طباعت مکمل ہو چکی ہے کے اعزاز میں تقریب رونمائی منعقد کی جارہی ہے ۔

یاد رہے مولانا امیر محمد اکرم اعوان رحمۃ اللہ علیہ کا وصال 7 دسمبر کو ہوا ۔آپ وقت کے عظیم صوفی ،مفسر قرآن،مترجم قرآن ،شاعر ،ادیب اور بہت سے حوالے ہیں آپ کے تعارف کے آخری سانس تک اپنے مشن پر کار بند رہے ۔آپ کی حیات مبارکہ کے بہت سے پہلو ہیں جس کی مفصل تفصیل بشری اعجاز کی لکھی کتاب ” راہ نورد شوق” میں ہے ۔

اس تقریب میں ملک کے طول و عرض کے علاوہ بیرون ممالک سے بھی خواتین و حضرات تشریف لائیں گے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button