جہلم

پنجاب فوڈ اتھارٹی کی ناقص کارکردگی، شہری ملاوٹ شدہ اور مضر صحت اشیاء خوردونوش استعمال کرنے پرمجبور

جہلم: ضلع بھر میں پنجاب فوڈ اتھارٹی کے ذمہ داران کی ناقص کارکردگی کے باعث شہری ملاوٹ شدہ اور مضر صحت اشیاء خوردونوش استعمال کرنے پرمجبور، پنجاب فوڈ اتھارٹی کا عملہ دفاتر تک محدود ، ضلع بھر کے شہری ناقص و غیر معیاری اشیاء خوردونوش استعمال کرنے پر مجبور ، شہری حلقوں کا ڈی جی پنجاب فوڈاتھارٹی سے نوٹس لینے کا مطالبہ۔

تفصیلات کے مطابق جہلم ضلع بھر کے علاقوں میں بااثر ملاوٹ مافیا نے پنجاب فوڈ اتھارٹی کی جانب سے کھلی چھوٹ کیوجہ سے دیہی علاقوں میں ملاوٹ شدہ اشیاء کی فروخت شروع کر رکھی ہے ، خطرناک کیمیکل سے تیار سفید پانی ملا دودھ شیر فروشوں نے دودھ کے نام پر فروخت کرنا شروع کررکھا ہے ، شیر فروش معمولی پیسوں کے لالچ میں کیمیکل ملا سفید پانی شہریوں کو دودھ کا کہہ کر فروخت کر رہے ہیں ، اندرون شہر کے بازاروں ،مارکیٹوں میں ملاوٹ شدہ مصالحہ جات سے شہریوں کی صحت سے کھیلا جا رہاہے۔

بیکریوں مٹھائیوں کی دکانوں میں صفائی ستھرائی کا انتہائی نا گفتہ بہ نظام ، بیکری اور مٹھائی کی دکانوں کے مالکان نے ہیلتھ سرٹیفکیٹ آویزاں کرکے صارفین کو دھوکہ دے کر مہنگے داموں مٹھائی اور بیکری کا سامان فروخت کررہے ہیں، کیمیکل ملے سفید پانی سے بااثر افراد آئس کریم بھی تیار کر رہے ہیں، جبکہ میرج ہالز اور ہوٹلوں میں ناقص کھانے اور صفائی کی ابتر صورتحال کی وجہ سے شہری زہنی طور پر پریشان ہیں۔

عوامی شکایات کے باوجود ضلعی انتظامیہ پنجاب فوڈ اتھارٹی دکانداروں کے خلاف کارروائی کرنے کی بجائے ڈنگ ٹپاؤ پالیسی پر گامزن ہیں ، شہریوں نے ڈی جی پنجاب فوڈ اتھارٹی ، ڈپٹی کمشنر جہلم سے نوٹس لینے کا مطالبہ کیاہے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button