پڑی درویزہ

یکساں نظام تعلیم؛ پرائیویٹ تعلیمی شعبہ حکومتی کاوشوں کو پس پشت ڈالتے ہوئے اپنی الگ ڈفلی بجانے میں مصروف

پڑی درویزہ: حکومت یکساں نظام تعلیم کے لئے کوشاں ، پرائیویٹ تعلیمی شعبہ حکومتی کاوشوں کو پس پشت ڈالتے ہوئے اپنی الگ ڈفلی بجانے میں مصروف، اس غیر مساویانہ روش کو لگام کون ڈالے گا۔ عوامی حلقوں کا سوال؟

تفصیلات کے مطابق وفاقی وزارت تعلیم ملک بھر میں یکساں نظام تعلیم کے حوالے سے یکساں تدریسی نصاب لانے کے لئے دن رات سرگرم عمل ہے اب تو اس سلسلے میں تربیتی ورکشاپوں کا اہتمام بھی کیا جارہا ہے ۔ سرکاری تعلیم اداروں میں سالانہ امتحانات تک منعقد نہیں ہوئے نئے تعلیمی سال کا آغاز بھی معمول سے ہٹ کر بہت دیر سے کیا جا رہا ہے۔

دوسری جانب نجی (پرائیویٹ ) تعلیمی شعبہ الگ سے اپنی ڈفلی بجانے میں مصروف ہے ۔ نجی شعبہ تعلیم وفاقی اور صوبائی وزارت تعلیم کی پالیسیوں کو پس پشت ڈالتے ہوئے اپنا تیار کردہ تدریسی نصاب اداروں میں قبل از وقت امتحانات کا ڈرامہ رچا کر نئی کلاسوں کے لئے فروخت کر چکا ہے نیز نئی کلاسز کا اجرا بھی کر چکا ہے ۔ نجی شعبہ تعلیم کا یہ اقدام سرا سر وفاقی اور صوبائی وزارت تعلیم کے احکامات کی نہ صرف حکم عدولی ہے بلکہ انظباطی خلاف ورزی ہے ۔

عوامی سماجی حلقوں نے اس سلسلے میں وفاقی اور صوبائی وزرا ء تعلیم سے مطالبہ کیا ہے کہ یکساں نظام اور نصاب تعلیم کو رواج دینے کے لئے پرائیویٹ شعبہ تعلیم کو انضباطی طریقہ سے لگام دینا ہو گا ہر دونوں شعبہ ہائے تعلیم کو ایک پیچ لانے لے لئے سخت اقدامات کرنے کی از حد ضرورت ہے ۔

عوامی سماجی حلقوں نے تجویز دی ہے کہ جب تک ہمارے تعلیمی اداروں میں آج سے پچاس سال قبل والا نظا م تعلیم و تدریس نافذ نہیں کیا جاتا اس وقت تک نظام تعلیم کو تباہی سے محفوظ نہیں کیا سکتا ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button