جہلم

جہلم کی رہائشی آبادیوں میں قائم جانوروں کے باڑوں اور جانوروں کے فضلے سے بیماریاں پھیلنے کا خدشہ بڑھ گیا

جہلم کی رہائشی آبادیوں میں قائم جانوروں کے باڑوں اورجانوروں کے فضلے سے بیماریاں پھیلنے کا خدشہ بڑھ گیا، مویشی باڑوں کو شہرسے باہر منتقل کرنے کا عوامی مطالبہ زور پکڑنے لگا۔

تفصیلات کے مطابق شہر سمیت ملحقہ آبادیوں میں بااثر افراد نے دودھ کے کارروبار کو فروغ دینے کے لئے مویشی باڑے قائم کر رکھے ہیں، جو دودھ فروخت کرکے ماہانہ لاکھوں روپے کما رہے ہیں مگر علاقہ مکینوں کے لئے صفائی کے حوالہ سے بہت سے مسائل پیدا کر رہے ہیں۔

مویشی باڑوں کے مالکان جانوروں کے فضلے کو مناسب جگہ پھینکنے کی بجائے، آبادیوں کے اندرگلی محلوں میں ہی پھینک دیتے ہیں جس کی وجہ سے بعض علاقوں میں فضلے کی گندگی اور بدبو کی وجہ سے علاقہ مکینوں کو آمدورفت میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہاہے۔

علاقہ مکینوں نے ڈسٹرکٹ آفیسر محکمہ ماحولیات، ڈپٹی کمشنرسمیت قانون نافذ کرنے والے اداروں سے مطالبہ کیا ہے کہ شہری آبادیوں سے مویشیوں کے باڑوں کو دور دراز ویران علاقوں میں منتقل کیا جائے تا کہ شہری آبادی غلاظت سے پاک ہو سکے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button