دینہاہم خبریں

حکومت کی بدترین غفلت اور نا اہلی، منگلا روڈ دینہ نے دلدل کی شکل اختیار کر لی

دینہ: ہر طرف کیچڑ گڑھے،منگلا روڈ نے دلدل کی شکل اختیار کر لی،ناقابل استعمال ہو گئی،ن لیگ کے بعد تبدیلی سرکار کو بھی عوام کی بدعائیں۔

تفصیلات کے مطابق تحصیل دینہ کی سب سے مصروف اور معروف ترین سڑک’’منگلا روڈ دینہ‘‘ آخری ہچکیاں لے کر دم توڑ چکی ہے۔ اب اس کو سڑک کہنا بھی سڑک کی توہین ہے۔ نہ ن لیگ کی پنجاب حکومت نے اپنے دس سال دور میں اس روڈ پر توجہ دی اور نہ ہی تاحال تبدیلی سرکار اس کی از سر نو تعمیر کرا سکی ہے۔ بارش کے دنوں میں یہ سڑک دلدل کی شکل اختیار کر لیتی ہے،ہر طرف گڑھے اور قریبی آبادیوں کا غلیظ پانی راہگیروں کے لئے عذاب بنے ہوئے ہیں۔

وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی چوہدری فواد حسین اور ان کے کزن ایم این اے چوہدری فرخ الطاف کے آبائی گھر لدھڑ منارہ اسی روڈ کنارے واقع ہیں مگر تاحال وہ بھی اس سڑک پر کام شروع نہیں کر ا سکے۔صرف لوگوں کو لولی پاپ دیا جا رہا ہے کہ بہت جلد اس سڑک پر کام شروع ہونے والا ہے۔ بارش کے دنوں میں کیچڑ اور خشکی کے دنوں میں مٹی،دھول، گردوغبار کا طوفان ٹرانسپورٹرز،راہ گیروں کا استقبال کرتے ہیں۔

مسلم لیگ ن نے بھی اپنے دس سالہ دور حکومت میں اس روڈ کو از سرنوتعمیر نہ کرا سکی اور یہی بات امیدوار ایم این اے چوہدری ندیم خادم اور امیدوار ایم پی اے مہر محمد فیاض کی شکست کا باعث بن گئی۔ اگر تحریک انصاف کے موجودہ منتخب نمائندگان نے بھی اس روڈ کے ساتھ سوتیلی ماں جیسا سلوک برقرار رکھا تو اگلے عام انتخابات میں ان کا حشر بھی ن لیگی امیدواران کی طرح ہو سکتا ہے،کیونکہ منگلا روڈ تحصیل دینہ میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتی ہے۔

ادھر کمشنر راولپنڈی ڈویژن زیر تعمیر بائی پاس روڈ کا معائنہ تو گاہے بگاہے کرنے آ جاتے ہیں،مگر ضلعی افسران ان کو منگلا روڈ کا وزٹ نہیں کراتے۔ عوامی حلقوں نے کمشنر راولپنڈی ڈویژن سے پرزور مطالبہ کیا ہے کہ وہ منگلا روڈ دینہ کا فوری طور پر وزٹ کریں اور اس سڑک کی از سر نو تعمیرکرا کر ایک بہت بڑے عوامی مسئلے کو حل کرائیں۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button