جہلم

جہلم شہر کے گرلز سکولوں و گرلز کالجوں کے ارد گرد منڈلانے والے اوباش نوجوان درد سر بن گئے

جہلم: شہر کے گرلز سکولوں و گرلز کالجوں کے ارد گرد منڈلانے والے اوباش نوجوان درد سر بن گئے ، خاص طور پر چھٹی کے وقت موٹر سائیکلوں پر سوار اوباش نوجوان طالبات کی گاڑیوں رکشوں نیز پیدل چلنے والی طالبات پر بے ہودہ آواز کستے دکھائی دیتے ہیں ،طالبات کے کالجوں اور سکولوں سے گھر تک پیدل آنا جانا دشوار ہو چکا ہے ،متعدد مرتبہ اس امر کی توجہ قانون نافذ کرنے والے اداروں کو دلوائی گئی مگر اوباشوں کا خاطر خواہ بندوبست نہ ہو سکا ، اس سلسلہ میں کئے گئے۔

سروے کے مطابق شہر کے گرلز کالجوں اور سکولوں کے اردگرد منڈلانے والے اوباش اور بگڑے ہوئے رئیس زادوں نے زیر تعلیم طالبات کا کالجوں اور سکولوں سے گھروں تک آنا جانا مشکل بنا دیا ہے ، گلی محلوں کے چوراہوں کے علاوہ چھٹی کے اوقات میں کالجوں اور سکولوں کے گرد گھومتے اور طالبات پر آوازیں کستے ، قہقے لگاتے ، یہ بگڑے رئیس زادے والدین اور طالبات کے لئے درد سر بنے ہوئے ہیں۔

شہر کی سیاسی سماجی مذہبی، رفاعی فلاحی تنظیموں کے عمائدین نے بارہا مرتبہ اس امر کی توجہ قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ذمہ داران کو دلوائی مگر وقتی طور پر نوٹس لینے کے علاوہ مسئلے کا مستقل حل نہیں نکالاجا سکا ، شہری حلقوں نے مقامی پولیس حکام سے گرلز کالجوں اور گرلز سکولوں کے قریب باوردی پولیس ملازمین تعینات کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس طرح ان اوباشوں کو موقعہ پر پکڑ کر فوجداری مقدمات درج کئے جائیں تاکہ فحاشی کے مرتکب رئیس زادے سلجھ سکیں ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button