جہلم

کورونا کی تیسری لہر میں شدت کے باوجود جہلم میں ایس او پیز کی خلاف ورزیاں اپنے عروج پر پہنچ گئیں

جہلم: کورونا کی تیسری لہر میں شدت کے باوجود کورونا ایس او پیز کی خلاف ورزیاں اپنے عروج پر پہنچ گئیں، بازاروں، دکانوں، پبلک ٹرانسپورٹس، سرکاری دفاتر میں ماسک پہننے والوں کی شرح محض دس سے بیس فیصد جبکہ اسی سے نوے فیصد ماسک کے بغیر ہی کورونا کے حملے کو دعوت دینے لگے ہیں۔

کورونا کی شدت سے نمٹنے کے لئے حکومت اور ماہرین صحت کی جانب سے کورونا ایس او پیز کے تحت ماسک پہننے ، سینٹی ٹائز رکے استعمال اور سماجی فاصلہ برقرار رکھنے کی ہدایات جاری کر رکھی ہیں۔

ضلع بھر میں کورونا ایس او پیز کی دھجیاں اڑائی جارہی ہیں، ہسپتالوں میں مریضوں کی بڑھتی ہوئی تعداد ضلع میں کورونا پازیٹوو ہونے کی شرح میں غیر معمولی اضافہ ہوجانے کے باوجود شہری کورونا ایس او پیز کو خاطر میں لانے کو تیار نہیں ، ماسک پہنے بغیر ہی گھروں سے نکلنے ٹرانسپورٹ ، ذاتی گاڑیوں، موٹرسائیکلوں پر سفر کرنے اور بازاروں میں خریداری کے لئے آنے والوں کی ایک بڑی تعداد ایس او پیز کو روندتی ہوئی دکھائی دیتی ہے۔

ماہرین صحت کی جانب سے آگاہی مہم کے ذریعے باقاعدگی سے شہریوں کو ماسک پہننے اور سینٹی ٹائزر کے استعمال کرنے سمیت سماجی فاصلہ برقرار رکھنے کی تاکید کی جا رہی ہے ، اس کے باوجود کورونا ایس او پیز کی پابندی کرنے والوں کی مایوس کن تعداد اور اکثریت کی جانب سے ایس او پیز کو خاطر میں نہ لانا ایک تشویشناک صورتحال پیدا ہونے کا خدشہ ہے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button